سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

سورۃ حشر کی آخری تین آیات کی فضیلت اور اس کی تحقیق

  • 13472
  • تاریخ اشاعت : 2024-05-27
  • مشاہدات : 4743

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

مسنون  دعاؤں  کے بعض مجموعوں  میں سیدنا معقل  بن یسار رضی اللہ عنہ  سے یہ  حدیث درج  ہے کہ  جو کوئی   صبح  کے وقت تین دفعہ  اعوذ بالله السميع العليم  اور ایک  دفعہ  سورۃ الحشر کی تین آیات مبارکہ : هوالله سے  هوالعزيز الحكيم  (٢٢تا٢٤) پڑھے۔تو ستر ہزار  فرشتے  مقرر کردئے جاتے ہیں جو  شام تک  اس کے لیے دعا کرتے رہتے  ہیں اگر وہ اس روز مرجائے  تو اسے شہادت کا ثواب  حاصل ہوگا اور جو کوئی  شام  کے  وقت یہ وظیفہ  پڑھتا ہے  وہ بھی یہی مرتبہ  حاصل  کرتا ہے ۔ یہ حدیث ، حدیث کی کون سی  کتاب میں درج  ہےآیا یہ صحیح  ہے یا ضعیف  وناقابل   عمل  ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

معقل  بن یسار رضی اللہ عنہ  کی طرف  منسوب  یہ روایت درج  ذیل  کتابوں میں "ابواحمد  الزبيري  عن خالد بن  طهمان ابي العلاء: حدثني  نافع  بن ابي  نافع نافع عن معقل  بن يسار " مروی ہے : ( سنن  الترمذی ، کتاب   فضائل القرآن باب 22ح2922 بتحقیقی ومسند  احمد5/ 26ح2057، سنن الداری  2/458ح3428 وعمل  الیوم  واللیلہ  لابن السنی  ح80) عجالۃ الراغب  الممتنی/بتحقیق الشیخ  سلیم  بن  عید  ابی اسامہ  الہلالی 1/131ح81،المعجم  الکبیر للطبرانی  20/ 229 ح 537 کتاب  الدعالہ 2/ 934ح 308 شعب الایمان  للبیہقی: 2502 نتائج  الافکار  لابن حجر 2/405 فضائل القرآن  لابن  الضریس ص104 ح230،الکشف  والبیان  للشعلی: ہذا تفسیرہ9/ 289 تہذیب الکمال  للمزنی 19/31 معالم التنزیل  للبغوی  4/ 327،لامالی  بشران  203/109 التدوین  فی اخبار قزوین  للرافعی  2/ 495 بحوالہ الشیخ الہلالی )

 کتاب الدعاء کےمحقق اور حافظ  ہیثمی  کی نافع بن ابی نافع پر جرح صحیح  نہیں  ہے۔

 قول راجح  میں نافع ثقہ ہیں  انھیں  یحیی  بن معین ( تاریخ  الدوری :851) نے ثقہ  قراردیا ہے۔

خالد  بن طہمان  سچا مگر اختلاط  کی وجہ سے  ضعیف  ہے ۔( صدوق‘ ضعيف  من  جهة اختلاطه كما  حققته  في  تخريج  سنن الترمذي  :٢٩٣٢ثم  كتبته  بالاختصار ) اور  یہ قطعا ثابت نہیں  ہے کہ اس  نے اختلاط  سے پہلے  یہ حدیث  بیان کی ہو لہذا یہ سند  ضعیف  ہے ، شیخ  البانی  ؒ  نےاس روایت کی جرح  کی ہے۔

( دیکھئے  ارواہ الغلیل  2/58 تحت  ح 342)

 اس روایت  کی تائید میں کوئی صحیح  یا حسن  روایت  موجود   نہیں ہے  (دیکھئے  نتائج  الافکار 2/402)

 اور حق یہی  ہے کہ   یہ روایت ضعیف  ہونے  کی وجہ سے  قابل عمل نہیں  ہے۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ علمیہ (توضیح الاحکام)

ج1ص491

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ