سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

دن اور رات کی نماز دو دو رکعتیں ہیں

  • 13414
  • تاریخ اشاعت : 2024-04-23
  • مشاہدات : 889

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

" صلوة  اليل والنهار مثني مثني " ( رات  اور دن  کی نماز  دو دو رکعت ہے ۔) صحه ابن حبان  وقال  النسائي  :هذا خطا "

( بلوغ  المرام  للحافظ ابن  حجر ؒ  ص106  رقم الحدیث 358 دارالکتب  قصہ خوانی بازار  پشاور)

اس حدیث کی صحت کیسی ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

یہ روایت اپنے شواہد کے ساتھ  حسن ہے ، (رواہ  ابوداود (1295) والترمذی  (597) وابن ماجہ 1322) والنسائی (3/ 227  ح 1667) واحمد  (2/26،51) وصحہ  ابن حبان  ( الاحسان  4/ 86 ح  2473) کذا فی بلوغ  المرام   بتحقیقی  (ص 40 ح  291)

 معرفۃ  علوم الحدیث  للحاکم  (ص58) میں اس کا ایک لاباس بہ شاہد  بھی ہے ۔

 امام بیہقی  نے صحیح سند  کے ساتھ سیدنا  عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ سے موقوفا نقل کیا ہے  کہ " صلوة  اليل والنهار مثني مثني " یرید  به  التطوع"   رات اور دن کی نفل نماز  دو دو رکعت ہے ۔( ج 4 ص487)

 یہ روایت  مرفوعا حکما  ہے دیکھئے  الموطا  بتحقیقی  (ص 37ح  260)

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ علمیہ (توضیح الاحکام)

ج1ص425

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ