سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

رفع الیدین والی حدیث کی سند کی تحقیق

  • 13367
  • تاریخ اشاعت : 2024-05-25
  • مشاہدات : 1106

سوال

رفع الیدین والی حدیث کی سند کی تحقیق
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

موطا امام مالک سیدنا  عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ  اور سیدنا مالک  بن حویرث  رضی اللہ عنہ  سے مروی  رفع یدین  والی احادیث میں صرف  رکوع  کے بعد رفع الیدین  کا ذکر  ہے جبکہ سنا ہے  کہ امام  بخاری  نے امام مالک  سے ہی سند لی ہے ۔ یعنی  دونوں  کی سند ایک  ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

سیدنا  مالک  بن حویرث  کی روایت  موطا امام مالک  میں نہیں  ہے جبکہ  سیدنا  عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ   کی روایت موجود ہے:

 مَالِكٌ، عَنْ ابْنِ شِهَابٍ، عَنْ سَالِمِ بْنِ عَبْدِ اللهِ، عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ عُمَرَ؛ أَنَّ رَسُولَ اللهِ صلى الله عليه وسلم، كَانَ إِذَا افْتَتَحَ الصَّلاَةَ، رَفَعَ يَدَيْهِ حَذْوَ مَنْكِبَيْهِ. وَإِذَا رَفَعَ (1) رَأْسَهُ مِنَ الرُّكُوعِ، رَفَعَهُمَا كَذلِكَ أَيْضاً. وَقَالَ: [ص:103] سَمِعَ اللهُ لِمَنْ حَمِدَهُ، رَبَّنَا وَلَكَ الْحَمْدُ، وَكَانَ لاَ يَفْعَلُ ذلِكَ فِي السُّجُودِ

( موطا  امام مالک  ص 13 حدیث : 59 روایۃ  عبدالرحمن  بن قاسم )

مؤطا  امام مالک  کی اس روایت  میں  شروع نماز ، رکوع سے پہلے  اوررکوع کے بعد تین  مقامات  پررفع یدین  کا اثبات  ہے، یہی روایت  امام بخاری  نے نقل  کی ہے ۔امام بخاری  اور موطا امام مالک کی سند  اور متن  ایک ہی ہے ۔لہذا مدینہ  کے امام اور بخارا کے امام  کی روایت  میں کوئی فرق نہیں ہے۔                                             (شہادت دسمبر  2001)

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ علمیہ (توضیح الاحکام)

ج1ص354

محدث فتویٰ

تبصرے