سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(333) مصیبت کے وقت ورد کرنا

  • 13054
  • تاریخ اشاعت : 2014-08-31
  • مشاہدات : 656

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
اسی طرح اگر  کو ئی مصیبت آجا ئے  یا کو ئی اور  وجہ  ہو تو  آیت  کریمہ  پڑھو اتی  ہیں ۔کیا آیت کر یمہ کا پڑھوا نا جا ئز ہے ؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

اسی طرح اگر  کو ئی مصیبت آجا ئے  یا کو ئی اور  وجہ  ہو تو  آیت  کریمہ  پڑھو اتی  ہیں ۔کیا آیت کر یمہ کا پڑھوا نا جا ئز ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

آیت کر یمہ:

﴿لا إِلـٰهَ إِلّا أَنتَ سُبحـٰنَكَ إِنّى كُنتُ مِنَ الظّـٰلِمينَ ﴿٨٧﴾... سورة الانبياء

کا ورد وظیفہ  اکیلے  صاحب  حاجت  وضرورت کو ہی  کر نا چا ہیے  دوسروں  سے کرا نے  کا کو ئی ثبو ت  نہیں ۔

یا در ہے کہ اس وظیفہ  کے لیے  شر یعت  میں نہ  کو ئی  وقت  مقرر  ہے اور نہ دن کا تعین  اور نہ کو ئی گنتی  کی حد  بندی  جس طرح کے بعض لو گوں  نے اختراعی طریقے  ایجا د  کر چھوڑ ے ہیں  ۔ارشا د  نبوی  صلی اللہ علیہ وسلم  ہے ۔

«من احدث فی امرنا ھذا ما لیس منہ فھو رد» صحيح البخاري كتاب الصلح باب اذا اصطلحوا علي صلح جور فالصلح مردود (٢٦٩٧)(بخاری ومسلم)

یعنی " جس نے  دین  میں اضا فہ کیا  وہ مردود ہے ۔"

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص615

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ