سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(283) دم کی شرعی حیثیت

  • 13005
  • تاریخ اشاعت : 2014-08-30
  • مشاہدات : 792

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
قرآنی  آیا ت پڑھ  کر پا نی پر  دم  کر نا  یا قرآنی  آیا ت   پلیٹ  پر لکھ  کر پینا  یا قرآنی آیا ت  لکھ  کر تعو یز گلے  میں  ڈا لنا  مسنون  ہے  یا بد عت ؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

قرآنی  آیا ت پڑھ  کر پا نی پر  دم  کر نا  یا قرآنی  آیا ت   پلیٹ  پر لکھ  کر پینا  یا قرآنی آیا ت  لکھ  کر تعو یز گلے  میں  ڈا لنا  مسنون  ہے  یا بد عت ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

دم  میں پھو نک  ما ر نی  جا ئز  ہے حضرت عا ئشہ   رضی اللہ تعالیٰ عنہا  سے مرو ی  ہے

’’ ان النبي صلي الله عليه وسلم كان ينفث في الرقية ’’ اسناده صحيح ابن ابي شيبة (٥/٤٤١) وكيع عن مالك عن الذهري عن عروة عن عائشه  رضي الله عنها......الخ ومعناه في البخاري كتاب الطب باب النفث في الرقية (٥١٤٧)

(مصنف  ابن ابی  شیہ :8/44)

"نبی  صلی اللہ علیہ وسلم   دم  میں پھو نک  ما را کر تے تھے ۔

قا ضی  عیا ض  رحمۃ اللہ علیہ   فر ما تے ہیں :" دم  میں پھو نکنے  سے مقصود  اس رطو بت  اور ہو ا سے  بر کت  کا حصول  ہے  جو ذکر  کی معیت  میں نکلتی  ہے جس  طرح  لکھے ہو ئے  ذکر  کے دھو ون  سے تبر ک  کیا جا تا ہے ۔" نیز  اس اکا مقصد  نیک  شگو ن  لینا  بھی ہو سکتا ہے جس طرح  کہ دم  کر نے  والے  سے سانس  الگ  ہو رہی  ہے  اسی طرح  مر یض  سے تکلیف  اور مر ض  دور ہو جا ئے ۔(فتح البا ری :10/168)

اور صاحب ’’تيسيرالعزيز الحميد’’(ص:166)میں  فر ما تے ہیں :

" دم  طب  ربا نی  ہے پس  جب مخلوق  میں سے  نیک لو گو ں  کی زبا ن  سے دم  کیا جا ئے  تو اللہ  کے حکم  سے شفا ء  ہو جا تی ہے ۔اور علا مہ  ابن قیم  رحمۃ اللہ علیہ   فر ما تے ہیں ۔

"دم  کر تے وقت پھو نک  ما ر نے  سے منہ  کی رطو بت  ہوا سا نس  سے مدد  لی جا تی  ہے ذکر  دعا ء  اور مسنو ن  دم  کے ساتھ  نکلتی  ہے اس لیے  کہ دم  پڑھنے  والے  کے دل  اور منہ  سے نکلتا  ہے پس  جب دم  با طنی  اجزا  ء میں  سے  رطو بت  ہوا سا نس  کے ساتھ  مل جا ئے  تو تا ثیر  کے لحا ظ  سےمکمل  اور عمل  کے لحا ظ  سے قو ی  ہو جا تا ہے اور ان  کے مجمو  عے  سے ایسی  مجموعی  کیفیت  پیدا  ہو تی  ہے ۔ جیسا کہ  مختلف  دوائیوں  کے با ہم  ملا نے  سے ہو تی  ہے ۔(الطب  النبو ی : ص:14)

امام احمد رحمۃ اللہ علیہ   کے بیٹے  کا کہنا ہے  میں  نے اپنے والد  کو مر یضو ں  کے لیے  تعویز  لکھتے دیکھا  اپنے اہل  خا نہ اور اہل  قرا بت  کو تعویز  لکھ  دیتے  اور عسر  ولا دت  کی بنا ء  پر عورت  کو چا ند ی  کے بر تن  یا  لطیف  چیز  پر  ابن  عباس  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   سے مرو ی  تعو یز  لکھ  دیتے ۔(مسا ئل امام  احمد  بن حنبل :3/1345)

ابن  عبا س  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  کے تعویز  کی تفصیل  کے لئے  ملا حظہ ہو۔(مصنف  ابن ابی  شیہ :8/27)

قرآنی  آیا ت  اور ثا بت  شدہ  دعاؤں  پر مشتمل  تعو یز  لکھنا  اگر چہ  جا ئز  ہے لیکن  میر ے  نز دیک  را جح  اور  محقق  با ت یہ ہے  کہ تعو یز وں  سے مطلقًا  پر ہیز  کیا جا ئے  صرف  ثا بت  شدہ دم اکتفا ء کی جا ئے اس با ر ے  میں  میر ے  قلم  سے تفصیل  " الا عتصا م  " میں چند  ما ہ  قبل  ہو چکی  ہے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص579

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ