سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(222) تصویر کا جواز

  • 12944
  • تاریخ اشاعت : 2014-08-26
  • مشاہدات : 1141

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

دوران  مطا لعہ  فو ٹو  کے جوا ز  کے متعلق  کچھ  ضعیف  و غر یب  روا یات  نظر  سے گزریں  کہ جن کے حوالے  میں فی  الوقت  نہیں دے  سکتا دوسرے  یہ کہ  علما ئے  حنا  بلہ  نے تصویر  کے جواز  کا فتویٰ  دیا تھا اسی طرح  سعودی  عرب  کے علماء  نے کر نسی  نو ٹو ں  پر تصویر  کے جوا ز کی بنیا د  کن  دلا ئل  پر رکھی  ہے ؟  یہ سوال تو  پرا گندہ سا ہے  مگر ۔

درست را ہنما ئی  تو آپ  جیسے  اہل  نظر  عبقری  صلا حیتوں  کے ما لک  شیوخ  ہی کر سکتے  ہیں ۔ ازرا ہ مہر با نی  یہ ارشا د  فر ما ئیں ۔فو ٹو  کے جوا ز کے بارے  میں  یہ روا یا ت  کہیں  یکجا  مل سکیں  گی ۔  دوسرے یہ  کہ اگر ذخیرہ  احا دیث  میں  ان کا کسی  نہ کسی  حد تک  وجو د  بھی ملتا ہو  اور مو جو د ہ دنیا  کا نظا م  بھی اسی "غیر  شر عی "  فتنے  پر چل رہا  ہو  تو اس  معا ملے  میں اس  حد  شدت  روا  رکھنا  کیو نکر  منا سب  ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اسلا می  شر یعت  میں بے شما ر  نصوص  ایسی ہیں  جو تصویر  کشی  کی حرمت  پر دال ہیں  چند  ایک  ملا حظ فر ما ئیں :

(1)«كل مصور في النار»(صحيح مسلم (5540)"ہر مصور  جہنم رسیدہ  ہو گا ۔(بخا ری مسلم )

(2)حضرت ابو ہریرہ  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  سے روایت ہے  کہ نبی  صلی اللہ علیہ وسلم  نے فر ما یا : اللہ  تعالیٰ  فر  ما تے ہیں ۔ کہ  اس سے  بڑا  ظا لم  کو ن ہو گا  جو میر ی  طرح تخلیق  کر نا  چا ہتا ہے ۔(اگر ان میں طا قت  ہے )  تو ایک  ذرہ  پیدا  کر کے  دکھائیں  یا  ایک  دا نہ  بنا  کر  دکھا ئیں  یا ایک  با ل  پیدا کر کے  دکھا ئیں ۔(بخاري كتاب اللباس (٥٩٥٢) (٧٥٥٩) مسلم كتاب الللباس والزينة باب تحريم التصوير (٥٥٤٣-٥٥٤٤)(بخا ری  و مسلم )

(3)حضرت ابن عبا س  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  فر ما تے ہیں  میں نے  آنحضرت  صلی اللہ علیہ وسلم  کو ارشاد  فر ما تے  ہو ئے سنا  کہ جس نے دنیا  میں کو ئی تصویر  بنا ئی  اسے قیا مت  کے دن یہ  حکم دیا جا ئے گا  کہ وہ اس میں رو ح پھو نکے  حا لا نکہ  وہ اس میں روح  نہیں  پھو نک  سکے گا۔ (بخاري (٥٩٦٣) مسلم (٥٥٤١)(بخاری)

ان احا دیث  سے معلو م  ہوا  کہ  ہر قسم  کی تصویر  بنا نا  حرا م  ہے خوا ہ  اس کا  سایہ  ہو یا  نہ ہو ہا تھ  سے بنا ئی  گئی ہو  یا کیمرہ  سے بنا ئی  گئی  ہو نبی  صلی اللہ علیہ وسلم   نے حضرت  علی  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  کو بھیجا  تھا  کہ وہ جس  تصویر  کو یا  بت کو بھی  دیکھیں  اسے  مٹا ڈا لیں۔(انظر الرقم المسلسل (280) (مسلم)

اس حدیث  میں یہ  بھی ہے  کہ اگر کو ئی  دو با رہ  ان  میں سے  کسی چیز  کا ارتکا ب  کر ے ۔ اس  نے دین  و شر یعت  کا انکا ر  کیا  جسے  حضرت محمد  صلی اللہ علیہ وسلم  پر نا ز ل  کیا گیا  ہے ۔(فتح البا ر ی 12/507طبع حلبی)

حا فظ ابن حجر  رحمۃ اللہ علیہ   حدیث  عائشہ  رضی اللہ تعالیٰ عنہا ----:

«ان اصحاب هذه الصور يعذبون يوم القيامة ويقال لهم احيوا ما خلقتم»و قال«ان البيت الذي فيه الصورة لا تدخله الملائكة» (صحيح البخاري(٥٩٥٧)صحيح مسلم(٥٥٣٣-٥٥٣٥)

یعنی " اصحا ب  صور  قیامت  کے دن  عذاب  دیے  جا ئیں  گے  اور ان  کو  کہا  جا ئے   گا ۔  جو کچھ  تم  نے  بنا یا  اس کو زندہ  کر و ۔ اور فر ما یا :  جس گھر  میں تصویر   ہو فرشتے  داخل نہیں  ہو تے ۔"

کی تشریح  کے ضمن  میں فر ما تے ہیں ۔کہ  اس سے معلو م ہو ا  کہ سب  تصویر یں  حرا م  ہیں  اور اس  اعتبا ر  سے  قطعاً کو ئی فرق  نہیں کہ ان کا سا یہ  ہے یا نہیں  وہ پینٹ  سے بنا ئی  گئی  ہیں ترا شی  گئی  ہیں  یا کرید  کر بنا ئی  گئی ہیں  یا  بن کر  بنائی گئی ہیں۔(فتح الباری :11/513)

آج  کے دو ر  میں کچھ فو ٹو  گرا فی  کی تصویروں  کو جا ئز  قرار  دیتے  ہیں لیکن  ان  کے پا س  واضح  کو ئی دلیل نہیں ۔شیخ  مصطفیٰ  جا معی  نے ان  کی تردید  میں خو ب لکھا ہے  جو یہ  کہتے ہیں  کہ فوٹو  گرا فی  کی تصاویر  جا ئز  ہیں  دوسری  طرف  علا مہ  نا صر  الدین  البا نی  رحمۃ اللہ علیہ   فر ما تے  ہیں وہ  تصویر   جا ئز ہیں  جس میں  کو ئی خا ص  فا ئدہ  ہو یا جیسے  کسی  نا گزیر  ضرورت  کے لیے  بنایا  جا ئے چنا نچہ  فر ما تے  ہیں  میں قار ئین  کی تو جہ  اس طرف  مبذول  کرانا  چا ہتا  ہو ں  کہ اگر چہ  ہم  بڑے  و ثوق  کے ساتھ  ہر قسم  کی تصویر  کی حر مت  کے  قائل  ہیں  لیکن  ہم  اس تصویر  کی مما نعت  کے  قائل  نہیں  جس  میں فا ئدہ   محققہ  ہوا اس  کے ساتھ  نقصان  کا کو ئی  پہلو  ثا بت نہ ہوا  اور  یہ فا ئد ہ تصویر  کے  بغیر  ممکن  نہ ہو ۔مثلاً:  وہ تصویریں  جن  کی طب  اور ڈاکٹری  کے سلسلہ  میں یا جغرا فیہ  میں  یا مجرمو ں  کی شنا خت  کے لیے  ضرورت  ہو تی  ہے تا کہ  انہیں  پکڑا جا سکے  یا لو گو ں  کو ان  سے مطلع  کیا  جا  سکے  تو اس قسم  کی تصویریں  جا ئز  ہو ں  گی  بلکہ شاید  بعض  مخصوص  اوقات  میں واجب  بھی  ہو ں  اس کی دلیل  دو درج ذیل حدیثیں  ہیں ۔

(1)حضرت عائشہ  رضی اللہ تعالیٰ عنہا  سے روایت  ہے کہ آپ گڑیوں  کے ساتھ  کھیلا  کرتی  تھیں ۔ اور آنحضرت   صلی اللہ علیہ وسلم  میر ی سہیلیوں  کو میر ے  پا س  لے آیا  کر تے تھے  تا کہ  وہ میر ے  سا تھ کھیلیں۔(صحيح البخاري كتاب الادب باب الانبساط الي الناس (٦١٣-) صحيح مسلم كتاب فضائل الصحابة فضل عائشة (٦٢٨٧) (٦٦٨٨)

اس  حدیث  کو (بخا ری 10/423)(مسلم  7/125)(احمد 6/166۔233۔234)الفا ظ  بھی امام  احمد  رحمۃ اللہ علیہ   ہی کی روا یت  کے ہیں  ۔اور  (ابن  سعد  8/66)نے روا یت  کیا ہے ۔

حضرت عا ئشہ  رضی اللہ تعالیٰ عنہا   کی ایک  دوسری  روا یت  میں ہے  کہ آپ  کے پا س  گڑیا ں  تھیں  اور جب  آنحضرت  صلی اللہ علیہ وسلم  گھر تشر یف  لا تے  تو ان  سے کپڑے   کے ساتھ  پردہ  کر لیتے  محدث  ابو  عوانہ  اس کا سبب  یہ بیان  کرتے  ہیں  کہ آپ  صلی اللہ علیہ وسلم   یہ اس لیے  کر تے  تا کہ  حضرت  عا ئشہ  رضی اللہ تعالیٰ عنہ اپنے  کھیل  کو ختم  نہ کر یں ۔

اس حدیث  کو ابن  سعد  رحمۃ اللہ علیہ  نے روا یت کیا ہے  اور اس کی سند  بھی  صحیح  ہے  (ابن سعد في طبقات النساء زكر ازواج رسول الله صلي الله عليه وسلم (٦/٤٦) طب دار الفكر بيروت

اس  حدیث  سے  یہ  استدلا ل  بھی  کیا گیا  ہے کہ  بچیوں  کےے لیے  گڑیاں  بنانا  جا ئز ہے ۔آنحضرت  صلی اللہ علیہ وسلم  نے تصویروں  کی  با بت  جو ممانت  فر ما ئی  ہے یہ صورت  اس سے  مستثنیٰ  ہے  قا ضی  عیا ض  نے  بھی  بڑے  وثوق  کے ساتھ  یہ بیا ن  فر ما یا ہے اور  اسے جمہو ر  کا مذہب  بتا یا  ہے  بچیوں  کے لیے  گڑیوں  کی خریدو فرو خت  کو جا ئز  قرار  دیا  ہے تا کہ  انہیں  بچپن  ہی سے امو ر  خا نہ  داری  کی تر بیت  دی  جا سکے۔(٧/٤٤٧-٤٤٨) شرح صحيح مسلم للقاضي عياض

(2) حضرت  ربیع  بنت  معوذ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے روا یت  ہے کہ آنحضرت  صلی اللہ علیہ وسلم  نے عا شو راء کی صبح  بستیوں (جو مدینہ  منورہ  کے گرد   و پیش  تھیں) کی طرف  پیغا م بھجوایا کہ جس  نے روزہ  نہ  رکھا  ہو وہ  دن  کا با قی  حصہ  بھی اسی  حالت  میں گزار ے  اور جس  نے روزہ  رکھا  ہو وہ  روزے  کو بر قرار  رکھے  حضرت  ربیع   رضی اللہ تعالیٰ عنہا   بیان فر ما تی ہیں  کہ اس کے بعد  ہم  ہمیشہ  روزے  رکھتے  تھے  اور چھوٹے  بچوں  کو بھی  روزہ  رکھو اتے  تھے  اور انہیں  اپنے  ساتھ مسجد  میں بھی  لے  جا یا  کر تے تھے  ہم  بچو ں  کو روئی کی گڑیاں  بنا  کر دیا  کر تے  وہ  انہیں  اپنے  ساتھ مسجد  میں بھی  لے جا یا کر تے تھے  جب  کوئی بچہ  کھا نے  کی  وجہ  سے رو تا  تو  دل (بہلا نے  کے لیے ) ہم اسے  گڑیا  دے دیتے ۔حتی کہ افطا ر  کا وقت  ہو جا تا  ایک روایت  میں ہے  کہ چھوٹے  بچے  جب ہم  سے کھانا  ما نگتے  تو ہم  انہیں  گڑیاں  دے دیتے  تا کہ  وہ  ان  سے  کھیلتے  رہیں  اور اپنے  روزے  کو پو را  کر لیں ۔(صحيح مسلم كتاب الصيام باب صوم يوم عاشوراء

اسے بخا ر ی (4/163) نے روایت کیا ہے الفا ظ  بخا ری  ہی کے  ہیں  مسلم (3/102)  نے بھی اسے  روایت کیا ہے  اور مسلم کی ایک دوسری روا یت  میں کچھ  زائد  الفا ظ  بھی  آئے  ہیں  یہ دو نو ں  حدیثیں   اس با ت  پر دلا لت  کر تی  ہیں  کہ تصویر اس وقت  جا ئز ہے   جب اس سے مصلحت  یا تر بیت  کا کو ئی  پہلو وابستہ  ہو جو  تہذیب  نفو س  ثقافت  یا تعلیم  کے لیے  مفید  ہو لہذا  ایسی  تمام  تصویریں  جن میں اسلا م  یا مسلما ن  کا کو ئی  فا ئدہ  ہو جا ئز  ہو ں  گی  البتہ  مشا ئخ  بزرگو ں  اور دوستوں  کی تصویریں  جن میں  کو ئی فائدہ  نہیں ہو تا  بلکہ کا فروں  اور بتو ں  کے  پجا ریوں  سے  مشا بہت  کا  باعث  بنتی  ہیں  حرا م  ہیں ۔(واللہ اعلم دعوۃ  الی  اللہ ص7)

بعض دیگر روا یا ت میں  بھی جوا ز  کے اشا ر ے  مو جو د  ہیں  لیکن  وہ سب  مخصوص  حا لا ت  میں ہے  عا م  نہیں ۔  سعودی  عر ب  کے علما ء  محققین  نے علی  الا طلا ق  فوٹو  کے جوا ز  کا فتویٰ  قطعاً  نہیں  دیا  بلکہ  علا مہ البا نی  رحمۃ اللہ علیہ  کی  طرح  وہ بھی  مخصوص  حا لا ت  میں جوا ز  کے قائل  ہیں  چنا نچہ  ہیئت  کبار  علما ء  کی دا ئمی  کمیٹی  برا ئے  بحث  اور فتویٰ  نے فتویٰ  صا در  کیا ہے کہ زندہ  چیزوں  کی فو ٹو  لینی  حرا م  ہے مگر  جہا ں  کو ئی  انتہا ئی  ضرورت  ہو جس  طرح  کہ تا بعیہ (رہا ئشی اجا زت  نامہ )  پا سپورٹ  اور فا سق  وفا جر اور لیٹروں  کی تصویریں  ہیں  تا کہ  ان پر  کڑی  نگا ہ  رکھ  کر جرا ئم  پر قابو پا یا جائے  اس کے علا وہ  اسی طرح  کی تصویریں  لینے  کا جوا ز  ہے جس  کے بغیر  چا رہ  کا ر نہیں (مجلۃ البحوث الاسلامیہ  الریا ض  عدد 19۔ص138)

سعودی عرب  کر نسی  نو ٹو ں  پر بھی  طبع  کر نے  کی اجا ز ت  اہل علم  نے ناگزیر  ضرورت  کے پیش نظر  دی ہے  عا م  حا لا ت  میں وہ  بھی مما نعت  کے قا ئل  ہیں  ہما رے  شیخ  محدث  روپڑی ایک سوال۔  کے جوا ب  میں فرما تے  ہیں تصویرکا بنانا  تو کسی  صورت  درست نہیں اور بنی ہو ئی کا استعمال دوشرطو ں  سے  درست  ہے  ایک  یہ کہ  مستقل  نہ ہو  کپڑے  وغیرہ میں نقش  ہو دو م نیچے  رہے  بلند  نہ لٹکا ئی  جا ئے پھر چند  ایک احا دیث  سے اس نظر یہ  کا اثبا ت کیا ہے  ملا حظہ ہو ۔

(فتا ویٰ  اہل حدیث جلد سوم 345۔346)

واضح  ہو کہ  مسئلہ ہذا  میں تہد ید  ووعید  کی چو نکہ کئی  ایک روا یا ت   وارد  ہیں جن  کی صحت  و حجیت  میں ذرہ  برا بر شک  و  شبہ  کی گنجا ئش  نہیں  لہذا  مجھے  تو اپنے  نا قص  علم  کی حد  تک  واللہ اعلم  ۔ احتیا ط  اس میں  نظر  آتی  ہے کہ بعض  احا دیث  سے اجا زت   کا پہلو  جس  انداز  میں  نکلتا ہے  معا ملہ  صرف  انہی  صورتو ں  پر محصو ر  رکھا  جا ئے  اور اس  میں تو سع  سے احتراز  کر تے  ہو ئے  ظا ہر ی  نصوص  سے  تجا وز  نہ کیا  جا ئے ۔ (واللہ اعلم با لصواب  وعلیم اتمہ)

دورا ن  تعلیم  حضرت  الشیخ  محدث  روپڑی  نے بھی فر ما یا  تھا  کہ گڑیا  بنا نے  اور اس سے  کھیلنے  کی رخصت  صرف بچیوں  کے لیے  یہ اجا زت  عام  نہیں ۔جنا ب والا فوٹو  کی اجازت  کی احا دیث  کو تلا ش  کر نے  کی بجا ئے  آپ  کو مما نعت  کی حدیثوں  پر تو جہ  مرکو ز  کر نی چا ہیے  جن  کے کتب  احادیث  میں انبار  لگے  ہو ئے  ہیں ۔ جب  یہ بات  مسلمہ  ہے  کہ احکا م  الہیٰ بدی  ہیں  تو پھر  خود  کو شر یعت  کے مطا بق  ڈھا لنے  کی سعی  کر نی  چا ہیے  فتنہ  و فسادات  کے زما نہ  میں دین  میں تر میم  کی سوچ  خطر نا ک  نظر یہ ہے جس  سے  بچاؤ  ہر صورت  ضروری ہے اللہ رب العزت  جملہ  مسلما نوں  کو دین  حنیف پر  استقا مت  کی تو فیق  بخشے  آمین !

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص534

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ