سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(220) تصویر کا شرعی حکم

  • 12942
  • تاریخ اشاعت : 2014-08-26
  • مشاہدات : 1642

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

تصویر کےبارے میں  شر یعت  نے سختی  سے رو کا ہے  بعض   لو گ  اعترا ض  کر تے  ہیں  کہ اس جدید  دور  میں  جو تصویر کیمرہ  کے  ساتھ  لی جاتی  ہے وہ  اس ضمن  میں نہیں  آتی  بلکہ یہ ممانعت  ان تصاویر  کے  با رہ  میں ہے  جو ہا تھ  سے بنا ئی  جا تی  ہیں اور کیمرہ  کی تصویر  تو ایک عکس  ہے لہذا  یہ  جا ئز ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اسلا م  میں بلا  استثناء  ہر  ذی  رو ح  کی تصویر   حرا م  ہے  چا ہے  جونسی  صورت  میں تصویر  کشی  کی جا ئے ۔رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے حضرت علی  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   سے فر ما یا تھا :  جو بھی تصویر  یا مجسمہ  دیکھو  اسے  مٹا  دو  اور جو قبر  اونچی  دیکھو اسے  برا بر کر دو ۔(1) نیز فر ما یا :  قیا مت  کے دن  سب سے  سخت  عذاب  مصوروں  کو ہو گا ۔(2) اسی بنا پر  آپ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے حضرت عا ئشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا  کے ہاں  پر دے  پر بنی ہوئی  تصویر  کا سختی سے انکا ر  فر مایا ۔(3) اس حدیث  سے معلو م ہو ا کہ سائے  دار  یا غیر سائے دار  ہر طرح  کی تصویر  حرا م  ہے  کیمرہ  سے  بنی  ہو یا غیر  کیمرہ  سے ۔

علا مہ  البا نی  رحمۃ اللہ علیہ   فر ما تے ہیں :

’’ والثانية  تحريمه تصوير ها سواء كانت مجسمة اوغير مجسمة وبعباده اخري لها ظل اولا ظل لها وهذا مذهب الجمهور قال النووي :ذهب بعض السلف الي ان الممنوع ما كان له ظل وما لا ظل له فلا باس باتخاذه مطلقا وهو مذهب باطل فان الستر ا لذي انكره النبي صلي الله عليه وسلم كانت الصورة فيه بلا ظل ومع ذلك فامر بنزعه ’’ (آداب الزفاف ص99 طبع 3)

1۔ صحیح مسلم کتاب الجنائز باب الامر بتسویۃ القبر (2243)

2۔ صحیح مسلم کتاب اللباس والزینة باب تحريم التصوير (٥٥٣٧) بخاري(٥٩٥٤-5950)

3۔ صحيح مسلم (5520-5525) بخاري (٥٥٩٤)

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص533

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ