سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(205) ائمہ کی تقلید کرنا

  • 12926
  • تاریخ اشاعت : 2014-08-25
  • مشاہدات : 601

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

تقلید  ائمہ  کو بعض  لو گ  واجب  کہتے  ہیں  اور غیر   مقلد  کو  بدمذہب  لہذا  تقلید  ائمہ  تفصیل  سے  رو شنی ڈا لیں ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

کسی  کو قو ل  بغیر  دلیل  لینے  کا نا م  تقلید  ہے اور  یہ حرا م  ہے قرآن  میں  ہے :

﴿اتَّبِعوا ما أُنزِلَ إِلَيكُم مِن رَ‌بِّكُم...٣﴾... سورة الاعراف

 (لو گو ! جو کتا ب  تم پر  تمہا ر ے  پرور دگا ر  کے ہا ں  سے نا ز ل  ہو ئی ہے  اس کی  پیروی  کرو  اور اس کے  سوا اور رفیقوں کی پیروی نہ کرو ۔''

اسی  بنا ء  پر  بے شما ر  نصوص  میں ائمہ  عظا م  نے اپنی تقلید  سے رو کا  ہے   تقلید  کو واجب قرار دینا  درا صل  اپنے  کو"  شر ک  فی الرسا لت " کا   مرتکب  ٹھہرا نا  ہے جب  کہ بقو ل  شا ہ  ولی  اللہ  عہد  رسا لت  سے  یہ صدیوں  بعد  کی پیداوار  ہے  تو پھر  واجب  کیسے  ہو گی  بعض  حنفی فقہا ء  نے تصر یح  کی ہے  کہ کو ئی  چیز  واجب  نہیں  ہو تی  مگر  وہ چیز  جس  کو اللہ  واجب  کر ے  اللہ تعا لیٰ  نے کسی  پر واجب  نہیں  کیا ہے کہ وہ ماموں  میں سے کسی  امام  کا مذہب  پکڑ ے  پس  اس کو  اپنے   اوپر  واجب  ٹھہرا  نا  اپنی  طرف  سے نئی  شر ح  ایجا د  کر نا  ہے ملا حظہ  ہو ۔(مسلم الثبوت مع شرح بحر العلوم۔

علامہ  ملا علی  قا ر ی  حنفی  رحمۃ اللہ علیہ  نے بھی  تسلیم  کیا ہے  کہ اللہ تعا لیٰ  نے کسی  مسلما ن  کو حنفی  شا فعی  وغیرہ  بننے  کا حکم  نہیں دیا  امام  شعرا نی  رحمۃ اللہ علیہ   میزا ن  الکبریٰ  میں فر ما تے ہیں جو شخص  ولی  کا مل ہے وہ  کسی  کا مقلد نہیں ہو تا  بلکہ  وہ علم  اس چشمہ  سے حا صل  کر تا ہے  جس  سے مجتہد  ین  نے کیا ہے   شیخ  کردی  اپنے رسا لہ  میں فر ما تے  ہیں یعنی  "طریقہ  مشا ئخ  "صوفیہ  کا عمو ما اور طر یقہ  اکا  بر نقشبند  یہ کا  خصو صاً اتبا ع  سنت  ہے اور وہ  کسی  متعین  مذہب  کے مقلد  نہ تھے ۔ردالمختا ر  میں ہے :

«ليس علي الانسان التزام مذهب معين »

"یعنی  انسا ن  پر واجب  نہیں  کہ کسی  معین  مذہب  کو اختیا ر  کر ے ۔

کتا ب  و سنت  پر عا مل  انسا ن کو بے مذہب  کہنا  اصلاً شرعی  نصوص  سے نا واقفی  کا نتیجہ  ہے  اللہ رب  العز ت  جملہ  مسلما نوں  کو فہم  و بصیرت  عطا  فرمائے ۔آمین !

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص506

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ