سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

ضعیف حدیث کے بارے میں محدثین کا طرز عمل

  • 12410
  • تاریخ اشاعت : 2014-06-15
  • مشاہدات : 1068

سوال




السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
احناف کی طرف سے اکثر یہ بات سامنے آتی ہے کہ اہل حدیث حضرات ضعیف حدیث کو بھی قبول نہیں کرتے، بلکہ ضعیف اورموضوع پر ایک ہی حکم لگاتے ہیں کہ وہ قابل اعتبار نہیں ہے ۔میرا سوال یہ ہے کہ محدثین کے نزدیک کیا ضعیف روایت قابل قبول نہیں ہے۔؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

احناف کی طرف سے اکثر یہ بات سامنے آتی ہے کہ اہل حدیث حضرات ضعیف حدیث کو بھی قبول نہیں کرتے، بلکہ ضعیف اورموضوع پر ایک ہی حکم لگاتے ہیں کہ وہ قابل اعتبار نہیں ہے ۔میرا سوال یہ ہے کہ محدثین کے نزدیک کیا ضعیف روایت قابل قبول نہیں ہے۔؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

شیخ ابن باز سے سوال کیا گیا کہ کیا ضعیف حدیث سے استدلال کرنا جائز ہے تو انہوں نے فرمایا:

اگر ضعیف حدیث کثرت طرق سے مروی ہوتو وہ حسن لغیرہ بن جاتی ہے ،جس سے استدلال کرنے میں کوئی حرج نہیں ہے،لیکن مجتہد پر لازم ہے کہ وہ قرآن وسنت سے دلیل تلاش کرے۔مزید تفصیل کے لئے لنک پر کلک کریں۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتوی کمیٹی

محدث فتوی


ماخذ:مستند کتب فتاویٰ