سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(194) مطلقہ کو حق مہر ادا کرنا ہم بستری کیے بغیر

  • 123
  • تاریخ اشاعت : 2011-12-05
  • مشاہدات : 928

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

محترم سوال یہ ہے کہ بکر کا نکاح ٹیلیفون کے ذریعے قرار پاتاہے ۔ کچھ عرصہ کے بعد بکر (بغیر ہم بستری کے) اپنی بیوی کو طلاق دے دیتا ہے۔ اب اس سلسلے میں حق مہر کہ کیا معاملہ ہو گا۔؟ کیا حق مہر پورا ادا کرنا ہوگا یا کہ آدھا۔؟


 

الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اگر منکوحہ کو خلوت صحیحہ اور مباشرت سے پہلے طلاق دے دی جائے تو اس صورت میں مقرر شدہ حق مہر کا نصف دینا ہو گا۔اور اگر عورت اس نصف حق مہر کو معاف کردے تو اس کا بھی اسے اختیار ہے اور اگر خاوند پورا حق مہر دے دے تویہ حسن سلوک ہے اور مستحب امر ہے۔ ارشاد باری تعالیٰ ہے:

﴿وَإِن طَلَّقْتُمُوهُنَّ مِن قَبْلِ أَن تَمَسُّوهُنَّ وَقَدْ فَرَضْتُمْ لَهُنَّ فَرِيضَةً فَنِصْفُ مَا فَرَضْتُمْ إَلاَّ أَن يَعْفُونَ أَوْ يَعْفُوَ الَّذِي بِيَدِهِ عُقْدَةُ النِّكَاحِ وَأَن تَعْفُواْ أَقْرَبُ لِلتَّقْوَى وَلاَ تَنسَوُاْ الْفَضْلَ بَيْنَكُمْ إِنَّ اللّهَ بِمَا تَعْمَلُونَ بَصِيرٌ ﴾البقرة237

اور اگر تم ان عورتوں کو چھونے سے پہلے طلاق دے دو اور تم نے ان کا حق مہر مقرر کیا ہوتو تم پر مقرر کردہ حق مہر کا نصف ہے سوائے اس کے کہ وہ عورتیں معاف کردیں(یعنی نصف حق مہر) یا وہ معاف کر دے(یعنی پورا دے دے) جس کے ہاتھ میں نکاح کی گرہ ہے۔ اور اگر تم معاف کر دو(یعنی پورا حق مہر ادا کر دو) تو یہ تقوی کے زیادہ قریب ہے۔ اور آپس کی فضیلت کو مت بھولو(یعنی جو اللہ تعالیٰ نے مردوں کو عورتوں پر دی ہے)، بے شک اللہ تعالی جو تم عمل کرتے ہو اسے دیکھ رہا ہے۔

 ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ علمائے حدیث

جلد 2 کتاب الصلوۃ


ماخذ:مستند کتب فتاویٰ