سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(51) عورت کا حالت جنابت میں اپنے بچے کو دودھ پلانا

  • 12005
  • تاریخ اشاعت : 2014-05-24
  • مشاہدات : 2452

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا عورت جنابت کی حالت میں اپنے بچے کو دودھ پلاسکتی ہے یا نہیں ؟کتاب وسنت کی روشنی میں اس کی وضاحت کریں۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

جنبی عورت کے لئے یہ پابندی ہے کہ نماز کی ادائیگی اس حالت میں نہیں کرسکتی کیونکہ اس قسم کی عبادت کےلئے طہار ت شرط ہے،جیسا کہ حیض و نفاس والی عورت کےلئے شرط ہے کہ جب وہ حیض و نفاس سے پاک ہو تو نماز وغیرہ کی ادائیگی کے لئے طہارت واجب ہے لیکن بچے کو دودھ پلانے کے لئے طہارت شرط نہیں ہے ،جیسا کہ کھانا پکانے اور گھر کے دوسرے کام کاج کرنے کے لئے طہارت ضروری نہیں۔ اس لئےعورت کا غسل سے قبل دودھ پلانا جائز ہے ،خواہ وہ غسل جنابت ہو یا غسل حیض یا غسل نفاس ،ان حالات میں بچے کو دودھ پلانے کےلئے طہارت کی شرط لگانا کتاب و سنت سے ثابت نہیں ہے۔(واللہ اعلم )

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

 

فتاوی اصحاب الحدیث

جلد:2 صفحہ:92

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ