سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(187) عورت کی اگر داڑھی مو نچھ اُ گ آئے تو اسکا مونڈنا جائز ہے

  • 11937
  • تاریخ اشاعت : 2014-05-21
  • مشاہدات : 747

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته


اگر عورت کی دارھی مو نچھ اُ گ آ ئے تو اسے مونڈنا جائز ہے ؟



السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

اگر عورت کی دارھی مو نچھ اُ گ آ ئے تو اسے مونڈنا جائز ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اس  کے لئے اپنی داڑھی مو نڈنا جا ئز ہے کیو نکہ اسکا مردوں کی داڑھی والا حکم ہے بلکہ اس کے لئے یہ مستحب ہے جیسے کے امام نووی نے شرح مسلم ( 1؍ 139 ) میں کہا ہے:

’’بارھواں مسئلہ :  داڑھی کا مونڈنا حرام ہے لیکن اگر کسی عورت کی داڑھی نکل آ ئے تو اس کیلئے سکا مونڈنا مستحب ہے اور (2؍ 205 ) میں کہا ہے : ‘‘ ہاں اگر عورت کی داڑھی مو نچھ اُگ آئے  تو اسکا ازالہ حرام نہیں بلکہ ہما رے نزدیک مستحب ہے اور ابن جریر کہتے ہیں : اسکے لئے اسکی داڑھی یا داڑھی بچہ مونڈنا جا ئز نہیں اور نہ ہی مو نچھ مو نڈ نا جائز ہے اسکی خلقت کو کمی پیشی سے نہیں بد ل سکتی ۔ اور ہمارا مذہب وہئ ہے جو آگے بیان ہوا ہے کے ان کے لیئے داڑھی مو نچھ ’ عنفقہ کا ازالہ مستحب ہے انکے لئے نہی آبرووں اور چہرے کے اطراف میں ہے ۔

اور یہ سا بقہ مسئلہ میں گزر چکا ہے کہ شار ع جس سے سکوت اختیا ر کرے وہ معاف ہے۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ الدین الخالص

ج1ص412

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ