سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(373) فوت شدہ انسان کے مال پر زکوٰۃ

  • 1177
  • تاریخ اشاعت : 2012-06-11
  • مشاہدات : 583

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
ایک شخص کے پاس ایک تہائی مال کسی فوت شدہ انسان کا ہے اور کچھ درہم یتیموں کے ہیں، تو کیا ان میں زکوٰۃ ہے؟


السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ایک شخص کے پاس ایک تہائی مال کسی فوت شدہ انسان کا ہے اور کچھ درہم یتیموں کے ہیں، تو کیا ان میں زکوٰۃ ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد! 

وہ ایک تہائی حصہ جو کسی فوت شدہ کا ہے، اس میں زکوٰۃ نہیں ہے کیونکہ اس کا کوئی مالک نہیں بلکہ وہ تو نیکی کے کاموں کے لیے وقف ہے، البتہ جو یتیموں کے درہم ہیں، ان میں زکوٰۃ واجب ہے۔ یتیموں کا ولی ان کی طرف سے زکوٰۃ ادا کرے گا کیونکہ اہل علم کے مختلف اقوال میں سے صحیح قول یہ ہے کہ زکوٰۃ میں بلوغت اور عقل شرط نہیں ہے کیونکہ زکوٰۃ تو مال میں واجب ہوتی ہے۔

وباللہ التوفیق

فتاویٰ ارکان اسلام

نمازکے مسائل  

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ

ABC