سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(484) سرکے بالوں شرعی حیثیت اور مقدار

  • 11758
  • تاریخ اشاعت : 2014-05-18
  • مشاہدات : 632

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

شیخوپورہ  سے محمد  لطیف  سوال کر تے ہیں  کہ سر کے با لو ں  کی شرعی   حیثیت  اور مقدار  کیا ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

کتب  حدیث  میں مرو ی  مختلف  روا یا ت  سے پتہ   چلتا  ہے  کہ سر  کے  با ل  مو نڈ ے  جا سکتے   ہیں  اور شر یعت  نے ایسا  کر نے  کی اجا زت  دی  ہے البتہ  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کا معمو ل  یہ تھا  کہ آپ  کے با ل  رکھے  ہوتے تھے  اور ان  کی مقدار  مختلف  اوقا ت  میں مختلف  ہو تی تھی  کبھی  نصف کا نو ں  تک  اور کبھی   کا نو ں  کی لوؤں  تک  بڑھ  جا تے  بعض  اوقات  کند ھوں  تک  بھی پہنچ  جا تے اور کبھی  گیسو  کی شکل  اختیا ر  کر لیتے  تھے  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کا رارشا د  ہے کہ  جس  کے بال  ہو ں  وہ  انہیں  سنوارنے  کا پا بند  ہے سنوا ر نے  تیل  لگا نا  کنگھی  کر نا اور درمیان  سے مانگ  نکا لنا  شا مل ہے لیکن  افسو س ہما ری  اکثر یت  آج  کل مغر بی  تہذیب  سے متاثر  ہے  فینسی  با ل اور  ٹیڑھی  ما نگ   نکا لنے  پر فخر کیا جا تا ہے  حا لا نکہ  ایسا رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کے معمو لا ت  کے خلا ف  ہے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

 

فتاوی اصحاب الحدیث

جلد:1 صفحہ:485

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ