سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(413) ٹی وی کا شرعی حکم

  • 11679
  • تاریخ اشاعت : 2014-05-14
  • مشاہدات : 839

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

بہا ولنگر  سے  مرزا ا کبر لکھتے  ہیں کہ میر ے  گھر  میں ٹی وی  نہیں ہے  اور نہ  ہی  اسے پسند  کر تا ہو ں  میر ے  بچے  پڑو س  میں جا کر  ٹی وی  دیکھ  آتے ہیں جس  سے بچو ں کے اخلا ق و عا دا ت  میں بگا ڑ  پیدا ہو رہا ہے  بچو ں  کو سزا  اس  لیے  نہیں  دیتا  کہ اس سے    بھی  اخلا ق  پر برا  اثر پڑتا ہے  کیا ایسے  حا لا ت  میں مجھے  ٹی وی  رکھنے  کی اجا ز ت  ہے ۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

ٹیلی ویژن  دو ر حا ضر  اکا ایک  ایسا  فتنہ  ہے کہ اس کے  متعلق  نر م  گو شہ  رکھنے  وا لو ں  کا ضمیر  بھی چیخ  اٹھا  ہے کہ اس کے دیکھنے  سے بچو ں  کے اخلا ق  و عا دا ت  میں بگا ڑ  پیدا ہو رہا ہے  جیسا کہ سوال میں اس  کی وضاحت  ہے ارشا د با ر ی تعا لیٰ  ہے :' جو لو گ  ایما ندا رو ں  میں فحا شی  پھیلا نا چاہتے  ہیں وہ دنیا اور آخرت  میں  سخت سزا کے حق دا ر ہیں ۔(10/التو بہ :19)

اس آیت  کر یمہ  کی ز د میں وہ  تمام  ذرا ئع  ووسا ئل  آجا تے ہیں  جو فحا شی  پھیلا نے  بے حیا ئی  عا م  کر نے  بد  اخلا قی  کی تعلیم  دینے  بے  راہ  روی  پر اکسا نے  جذبا ت  بھڑ کا نے  جنسہی خوا ہشا ت  ابھا ر نے  اور رقص  وسرورکا سا مان  مہیا  کر نے پیش  پیش  ہیں ٹیلی  ویژن  اگر چہ  دنیا وی  لحا ظ سے  بے شما  فوا ئد  و منا فع کا حا مل  ہے لیکن  دینی  اور اخلا قی  اعتبا ر  سے انتہائی  نقصان  دہ  اور  ضررسا ں  واقع  ہو ا  ہے  با لخصوص  نئی  پو د  میں آلودگی  اور نو جو ا نو ں  میں  حیا  با ختگی  پیدا  کر نے  میں اس  نے بہت  نما یاں  کر دار ادا کیا  ہے  ہما رے  نز دیک  ٹیلی ویژن  کے دنیا وی  فو ائد  کے پیش  نظر  اس کے گھر  میں رکھنے  کا جو از  مہیا  کر نا  ایک  چو  ر  دروا ز  ہ  کھو لنا  ہے اس  کے ذر یعے  شیطا ن  اور اس کی  ذریت کو اپنے  گھر  کا مو قع  فرا ہم  کرنا ہے اس کے مفا سد  کے پیش  نظر  مکمل  طو ر  پر اس  سے اجتنا ب  کر نا  چا ہیے  اور بچو ں  کو سختی  سے منع  کر نا چا ہیے  اس کے لیے اگر بچو ں کو تھو ڑی بہت سزا دی جا ئے  تو اس سے بچو ں کے اخلا ق متا ثر نہیں ہو ں گے  جیسا کہ سا ئل نے اس خد شہ کا اظہا ر   کیا ہے  اسلا می  غیر ت  اور دینی  حمیت  کا تقا ضا  بھی یہی  ہے کہ ٹیلی ویژن  کے متعلق  اپنے ا ندر  کو ئی گو شہ  نہ رکھا جائے  اس کے نقصا نا ت  کی مختصر  جھلک   یہ ہے  کہ ٹیلی  ویژن  ایسے حیا سو ز ڈرا مے  اور فحش  منا ظر  پیش کر تا  ہے کہ  انہیں  دیکھ  کر  با حیا  انسا ن  کا  سر شرم  سے جھک جا تا ہے  چو ر ی  ڈکیتی  ما ر دھا ڑ کی عملی تر بیت  دی جا تی  ہے جس سے  امن  عا مہ  تبا ہ  بر با د  ہو رہا  ہے  نیز  اخلا ق  و کردار  بگا ڑنے  میں  بڑا  مؤثر  کر دار سر انجا م  دے  رہا  ہے  اس کے  علا وہ  تصویر  کو اس میں نما یا ں  حیثیت  دی جا تی  ہے جو فتنہ  و فسا د  کی اصل  بنیا د  ہے جسے  شر یعت  نے  حرا م  قرار دیا  ہے  ان  کے علا وہ   اور بھی  بے شما ر  نقصا نا ت  ہیں  جن  کے پیش نظر  اس  سے  کلی  اجتنا ب  کر نا  ہی منا سب  ہے ۔(واللہ اعلم )

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

 

فتاوی اصحاب الحدیث

جلد:1 صفحہ:424

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ