سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(326) ولی کے بغیر نکاح کا حکم

  • 11576
  • تاریخ اشاعت : 2014-05-05
  • مشاہدات : 539

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

چھا نگا ما نگا سے عبد الجبا ر لکھتے ہیں  کہ میرا  ایک لڑکا  جو شا دی  شدہ ہے اور  صا حب اولا د ہے اس نے ایک لڑکی کو  اغوا کر کے  اس کے سا تھ  نکا ح  کر لیا  ہے نکا ح  کے وقت  لڑکی کی طرف سے کو ئی  حقیقی  ولی  مو جو د   نہ تھا  قرآن  و حدیث  کی رو سے  اس نکا ح  کی شر عی  حیثیت  واضح  فرما ئیں


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

واضح رہےکہ شریعت  اسلا میہ میں کسی  عورت  کو بذا ت  خو د  نکاح  کر نے  کی اجا ز ت  نہیں ہے  بلکہ  نکا ح  کے وقت  سر پرست  کی  اجازت کو ضروری  قرار  دیا گیا  ہے  چنا نچہ  حدیث  میں ہے  کہ سر پر ست  کے بغیرکو ئی   نکا ح  نہیں ہو تا ۔(جا مع  ترمذی :کتا ب  النکا ح حدیث نمبر 1101)

رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے مز ید  فر ما یا  کہ جو  عورت  اپنے  سر پر ست  کی اجازت  کے بغیر  نکا ح  با طل  ہے ۔(مسند امام احمد  رحمۃ اللہ علیہ  :6/16

باطل  نکا ح  وہ ہو تا  ہے کہ جو  سر ے سے  ہو تا ہی نہیں  ہے لہذا  صورت  مسئو لہ  میں یہ نکا ح   منعقد  ہی نہیں  ہو ا اسطرح نکا ح کر نے  والا  جو ڑا  گنا ہ  کی زندگی  بسر  کرتا  ہے انہیں  تو بہ  کر کے  والدین  کو اعتما د  میں لا  از سر  نو نکا ح کر نا  ہو گا  اس مسئلہ  کی مز ید  و ضا حت  با یں  طو ر  ہے کہ  سر پر ست وہ ہو تا ہے  جو زیر  سر پرست  کا کسی عورت  کے رشتہ کے بغیر  قرا بت  دار  ہو یعنی  اس سر  پر ستی  کی بنیا د  قرابت  پر  ہے اسلیے  قر یبی  رشتہ  دار  کی موجو د گی  میں دور  کا رشتہ  سر پر ست نہیں ہو سکتا  کیوں  کہ جو  سر پرست  با عتبار  رشتہ  جتنا  قر یب  ہو گا  اتنا ہی اس کے دل  میں اپنے  زیر  سر پر ست کے لیے  شفقت  و ہمدردی  زیا دہ  ہو گی  اوروہ اس  کے  مفا دا ت  کا تحفظ  زیا دہ  کر ے  گا  یہی  وجہ ہے  کہ با پ  کو اس  معا ملہ  میں  اولیت  حا صل  ہے  اگر با پ  کے متعلق  با وثو ق  ذرائع  سے پتہ چل جا ئے  کہ وہ  اپنے  زیر  سر پر ست کے لیے  مہر و وفا  کے جذبا ت  سے  عاری  ہے یا  اس کے  مفادات  کا محا فظ  نہیں  ہے تو  وہ خو د  بخو د  حق  دلا یت  سے محروم  ہو جا تا  ہے اور  یہ حق  ولا یت  اس کے  بعد  کے رشتہ دارو ں  کو منتقل  ہو جا تا  ہے  اگر  رشتہ  دارو ں  میں کو ئی  بھی  مفا دات  کے تحفظ  کی ضما نت  نہ  دے تو حق  ولا یت   حا کم  وقت  کو منتقل  ہو جا تا  ہے حدیث  میں اس  کی صراحت  مو جو د  ہے چنا نچہ  بعض  احا دیث  میں "ولی مرشد"کے  الفا ظ  ملتے  ہیں  جس  کا مطلب  یہ ہے  کہ ولی  جو  ہمدردی  کے جز با ت  سے سر  شا ر  ہو وہ  فریضہ  نکا ح  کی اجا زت  کا حق دار  ہے درج  با لا  وضا حت سے یہ معلو م ہواکہ  ولی  کو کھلے  اختیا را ت  نہیں  دئیے  گئے  کہ وہ  جہا ں  چا ہے  اپنی بچی  کا نکاح  کر دے  اور نہ  ہی بچی  کو کھلی  آزادی ہے کہ وہ جہا ں   چا ہے  اس کی مرضی کے بغیر  نکا ح  کر ے  بلکہ  ایک دوسرے  کے جذبا ت  کا احترا م  کرتے  ہو ئے  ہمدردی  اور شفقت  کی فضا  میں نکا ح  ہونا چا ہیے بہر حا ل آج کل جو لڑکیا ں  اپنے گھر وں سے فرار  ہو کر عدا لت  میں از خو د  نکا ح کر لیتی ہیں  شریعت  کی  نظر  میں ایسا  نکا ح  سرے  سے منعقد  نہیں ہو تا صورت مسئولہ میں  اسی طرح  کا نکا ح  معلو م  ہو تا ہے  لہذا  یہ نکا ح  نہیں ہے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

 

فتاوی اصحاب الحدیث

جلد:1 صفحہ:344

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ