سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(284) خاوند کا اپنی بیوی کی بیماری کےاخراجات حق مہر سے پورے کرنا

  • 11501
  • تاریخ اشاعت : 2014-04-30
  • مشاہدات : 617

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ملتان سے ایک صاحب  پو چھتے  ہیں کہ  ایک  عورت  فوت  ہو گئی  اس کے  پسماند  گا ن  میں  سے خا و ند   والد  والد ہ  اور ایک  بھا ئی  اور دو بہنیں زندہ  ہیں اس کا ترکہ (حق مہر اور جہیز وغیرہ) کیسے  تقسیم  ہو گا  نیز  کیا  خا و ند  کو  یہ  حق  ہے  کہ متو فیہ  کی بیما ر ی  پر اٹھنے والے  اخرا جا ت  اپنی  بیو ی  کے  حق  مہر  اور سا ما ن  جہیز  سے پورے  کر ے  یا اس کا علا ج  معا لجہ  اس کے  ذمے  ہے اس  کے علا وہ  متوفیہ  کی شا دی  وٹہ سٹہ  کی بنیا د  پر  ہو ئی تھی  اس کی  وفا ت  کے  بعد  دوسری لڑکی  والو ں   سے طلا ق  کا مطا لبہ  کر دیا  ہے جبکہ  خا وند  اسے  آبا د  کر نا  اور اسے  بسا نا چا ہتا  ہے کیا  ایسا  مطا لبہ  کر نا  شر عاً  صحیح ہے ؟  اگر  صحیح  ہے  تو  کیا  حق  مہر  اور سا ما ن  جہیز وغیر ہ  واپس  لینا  درست  ہے یا نہیں ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

فو ت  ہو نے والی  عورت  کا ترکہ (حق مہر اور سا ما ن  جہیز  وغیرہ )  با یں  طو ر  تقسیم  کیا جا ئے  گا  کہ خا و ند  کو نصف  والد ہ  کو چھٹا  حصہ  اور با قی والد کو ملے گا  جب کہ  اس کے  بہن  بھا  ئی  محروم  ہیں  کیو نکہ  والدہ  مو جو د  ہے دلا ئل یہ ہیں : (الف)قرآن  میں ہے  :" کہ جو ما ل  تمہا ری  عورتیں چھو ڑ  مر یں  اگر  ان کی اولا د  نہ ہو تو  اس میں  نصف  حصہ تمہا را  ہے (4/النسا ء :12)

(ب)ارشاد  با ر ی تعا لیٰ  ہے  کہ  اگر  اولا د  نہ  ہو ا  ور  والدین  اس کے  وارث  ہو ں  تو والد ہ  کے لیے  ایک تہا ئی  اور اگر  میت  کے بہن  بھا ئی  ہوں تو  والدہ  کو  چھٹا  حصہ  ملتا ہے (4/النساء :11)

(ج)با پ  محض  عصبہ  ہے لہذا  مقررہ حصہ  لینے والو ں سے جو مال  بچے  اس کا حقدار  با پ  ہے ۔ (د)والد  کی مو جو د  گی  میں بہن  بھا ئی بحیثیت  عصبہ  محرو م  ہو تے ہیں  کیو نکہ  با پ  کا تعلق  زیا دہ  قوی  اور قر یب  ہے   ہے  جائیداد  کے کل  چھ  حصے  کر لیے  جا ئیں ان سے تین  خا وند  کو ایک والدہ کو با قی  دو والد  کو دے دئیے  جا ئیں  خا و ند  کی ذمہ  داری  ہے کہ وہ دستو ر کے مطا بق  اپنی  بیو ی  کے کھا نے  پینے  لبا س  اور رہا ئش  و دیگر  ضرورت زندگی کا بندو بست  کر ے ارشا د  با ر ی  تعالیٰ ہے :" دودھ پلا نے والی  ماؤں  کا کھا نا  اور کپڑا  دستور  کے مطا بق  با پ کے ذمہ  ہو گا ۔(2/ البقرہ :233)

نیز اللہ تعا لیٰ نے  جو مر دوں  کو عورتو ں  پر بر تر ی  عنا ئت  فر ما ئی ہے اس کی ایک  وجہ  با یں  الفا ظ  بیا ن  کی  " کہ وہ  اپنا ما ل  خرچ  کر تے ہیں ۔(4/النسا ء :34)

نیز حدیث  میں ہے  :"  کہ خا وند  جو خو د  کھا تا ہے اس سے بیو ی  کو کھا لائے  اور جو پہنتا  ہے اس سے  اپنی رفقیہ  حیا ت  کو  پہنا ئے (مسند امام احمد  رحمۃ اللہ علیہ :5/73)

لہذا خا و ند کو عورت کے تر کہ  سے اپنے  حصہ  سے زیا دہ  لینے کی شر عاً اجازت  نہیں ہے  بیما ری  پر اٹھنے  والے  اخرا جا ت  کا وہ خو د  ذمہ دار  اسلام میں وٹہ سٹہ  نا جا ئز ہے جہا لت  کی وجہ  سے اگر  ایسا ہو چکا  ہے  اور اولا د  وغیرہ  بھی  اللہ نے دے  رکھی ہے تو  نکا ح  کو بر قرار   رکھنے  کی علما نے  گنجا ئش  رکھی  ہے لیکن  اگر اتفا ق  سے ایک  لڑ کی  فو ت ہو گئی  ہے تو  دوسری  لڑکی  والو ں  کو یہ حق  نہیں پہنچتا  کہ وہ اپنی بیٹی کا  گھر  اجا ڑ  نے  کے لیے  طلا ق کا مطا لبہ کر یں  اگر لڑکی  از خو د  نہیں رہنا  چا ہتی  تو اسے خلع  لینے  کی اجا زت  ہے لیکن  اس صورت  میں حق مہر  سے دستبردار  ہو نا  پڑے گا  نیز  خلع  بھی بذریعہ  عدا لت  ہو گا  سا ما ن  جہیز  لڑکی  کا ہے  وہ اس کی  واپسی کا مطا لبہ کر سکتی ہے  البتہ  اس با ت  کا خیا ل رکھا  جا ئے کہ با ہمی اتفاق سے  جہیز  کی جو چیز یں  استعما ل  ہو چکی  ہیں ان  کی واپسی  کا مطالبہ  شر عاً وا اخلا قاً درست نہیں ہے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

 

فتاوی اصحاب الحدیث

جلد:1 صفحہ:308

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ