سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(205) حالتِ روزہ میں بیوی سے جماع کرنا

  • 11405
  • تاریخ اشاعت : 2024-04-19
  • مشاہدات : 2486

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ایک آدمی  رمضا ن  المبا رک  میں  بلا  عذر  شر عی  بے روزہ  رہتا  ہے جب کہ  اس کی  بیو ی  پا بند ی  سے  روزے  رکھتی  ہے  خا و ند  بیو ی  سے اپنی  خو اہش  کا اظہا ر کر تا ہے  بیو ی  کے با ر  با ر  انکا ر  کر نے  کے با و جو د  با ز نہیں  آتا  اب عورت  مجبو ر  ہے اس کا روزہ ٹو ٹنے  پر اسے  گنا ہ  ہو گا یا نہیں  نیز  خا و ند  کا کر دار  شر یعت  کی نظر  میں کیسا  ہے ؟  کیا اس  پر  کو ئی  حد  یا تعز  یر  لگا ئی  جا سکتی  ہے کتا ب  و سنت  کی رو شنی  میں  جوا ب دیں ۔(محمد  افضل -----ڈسکہ )


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

واضح  رہے  کہ گھر  میں رہتے ہو ئے  رمضا ن ا لمبا رک  میں ہر  عاقل  و با لغ  کے لیے  روزہ رکھنا  فرض  ہے بشر طیکہ  وہ تند رست ہو  بلاوجہ  روزہ  تر ک  کر نا  بہت  سنگین  جرم  ہے  حدیث  نبو ی  صلی اللہ علیہ وسلم  کے مطابق  ایسا  انسا ن  ہر  قسم  کی خیر و بر کت  سے محروم  کر دیا  جا تا  ہے اور  قیا مت  کے دن  وہ بڑ ی   المنا ک  سزا  سے دو چار  ہو گا  اور جو  انسا ن  کسی  دوسرے  کے  روزے  کو خرا ب  کر نے  کا با عث  ہے وہ  بھی اسی قسم  کی سزا  کا حقدا ر ہے  رمضا ن  المبا رک  میں روزہ تو ڑ  نے کا کفا رہ  یا تاوان  اس صورت  میں  پڑتا  ہے جب  پہلے  روزہ  رکھا  ہو ا   ہو پھر  اسے خرا ب  کر دیا  جا ئے مسئو لہ  میں خا و ند  نے ایک سنگین  قسم  کی غلطی  کا ارتکا ب  کیا ہے  جو شر عاً قا بل  تعز یر  ہے لیکن  قا بل  حد  نہیں ہے  اسے اللہ  تعا لیٰ  سے معا فی  ما نگنا  چا ہیے  البتہ  بیو ی  مجبو ر  اور بے بس  ہے اس پر کو ئی گنا ہ  نہیں ہے  چو نکہ اس کا  روزہ ٹوٹ  چکا ہے اس لیے   رمضا ن  کے لیے  اس روزہ  کی قضا  دینا ہو گی  جب بھی مو قع  ملے  اپنے  خا و ند  کے علم  میں  لا کر  روزہ  رکھ  لے ۔(واللہ اعلم )

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

 

فتاوی اصحاب الحدیث

جلد:1 صفحہ:227

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ