سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(08) فقہی مسالک

  • 11128
  • تاریخ اشاعت : 2014-04-14
  • مشاہدات : 969

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ملتا ن سے  چند  ایک احباب  جما عت  لکھتے ہیں  کہ ہمیں  اپنے  خطیب صا حب کی  کچھ  با تیں  بہت  عجیب  سی معلو م  ہو تی  ہیں وہ فر ما تے  ہیں  کہ حنفی  شا فعی  ما لکی  اور حنبلی  اپنی مر ضی  کے مطا بق  دین بنا تے ہیں  اس لیے یہ تمام  فقہی  مسا لک  کے لو گ  کا فر  ہیں  ان  سے نکا ح  کر نا  ان کے پیچھے  نماز ادا کر نا  ان کے جنا زے پڑ ھنا  اور ان  سے ورا ثت  وغیرہ  کے معاملات  ممنوع  ہیں وہ  بطو ر  دلیل  قرآن  مجید  کی اس آیت  کو پیش  کر تے ہیں  کہ : جو لو گ  اللہ  کی طرف  سے نا ز ل  شدہ  حکم  کے مطا بق  فیصلہ نہیں کر تے  وہی  لو گ  کا فر ہیں ۔(5/المائد ہ:44)

مہر با نی  فرما کر  اس کے متعلق  ہما ری  را ہنما ئی فر ما ئیں ۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

کسی کو کا فر کہنا  تکفیر  کہلا تا  ہے فتنہ تکفیر  بہت  خطر نا ک  تبا ہ کن اور ہلا کت  خیز  ہے اس امت  میں سب  سے پہلے  اس فتنہ  کو خوا رج  نے برپا کیا جنگ صفین  کے مو قع  پر حضرت علی  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  اور حضرت امیر معا ویہ  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   کے درمیا ن  یہ طے  پا یا کہ حضرت  عمر و بن  العا ص  رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور حضرت  ابو موسیٰ  اشعری  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   جو فیصلہ  کر یں  وہ  فر یقین  کو  قبو ل  ہو گا  اسے  معا ہدہ  تحکیم  کہا جاتا  ہے خو ارج  نے اس معا ہدہ کے  آڑ  میں امت کے پسندیدہ  اور  بر گز یدہ  حضرات  کی تکفیر کی انہو ں نے اپنے  اس مو قف کے لئے  قرآن پا ک  کی ایک آیت  بطو ر  دلیل  پیش  کی وہ وجہ  ہے :"فیصلہ کرنے  حق تو صرف  اللہ  کے لئے  ہے ۔" (12/یو سف :40)

ان کا مطلب یہ تھا کہ جب فیصلہ کر نا  اللہ کا حق ہے تو یہ حق  بندو ں کے حوا لے کر نا کفر ہے  اور یہ حق بندو ں کو دینے وا لے  سب کا فر ہیں حضرت علی  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  نے حضرت ابن عبا س  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  کے ذر یعے  ان پر  اتما م  حجت کرتے ہو ئے  ان کی غلطی  کو واضح  کیا جب وہ با ز نہ آئے  تو نہر وا ن  کےمقام پر ان کی خو ب سر کو بی کی  حضرت عبد اللہ  ابن عمر  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  نے انہی کے متعلق  فر ما یا  تھا :  کہ خا ر جی  اللہ  کی مخلوق  میں سے  بد تر ین  لو گ ہیں  انہو ں  نے جو  آیا ت  کفا ر  کے متعلق  نا ز ل  ہو ئی تھیں  ان مسلما نو ں پر چپسا ں کر دیا ۔(صحیح بخا ری :المر تد ین  باب 6)

رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے فتنہ  تکفیر  کی سنگینی  با یں  الفا ظ  بیا ن  فرمائی  کہ جب  کو ئی شخص  اپنے بھا ئی  کو " اے کا فر " کہتا  ہے  تو ان دو نو ں  میں سے  ایک کا فر ہو جا تا  ہے ۔ صحیح بخا ر ی : کتا ب الا دب ۔6103)

اس حد یث کا مطلب یہ ہے  کہ جس کو کا فر کہا گیا ہے  اگر فی الحقیقت  کا فر ہے  تب تو وہ کا فر ہو ا  اگر وہ اقعشا کا فر نہیں تو  کہنے  ولا  کا فر  ہو گیا  یعنی  تکفیر  دو د ھا ری  تلوا ر  ہے  جس  نے کسی  ایک  کو ضرور  کا ٹنا  ہے  اس لیے  کو کا فر  کہنے  میں  بہت  احتیا ط  کی ضرو ت ہے  ہما ر ے  اسلا ف  اس  سلسلہ  میں بہت   محتا ط  تھے  وہ کسی  کلمہ  گو ا ہل قبلہ کو کا فر  نہیں  کہتے تھے انہو ں نے تکفیر  کے لئے  قو اعد و ضو ابط  وضع کئے  ہیں جن  کا  ہم  آیندہ  تذکر ہ  کریں  گے  ۔ تا ہم  امام  بخا ر ی   رحمۃ اللہ علیہ   نے مذکو رہ با لا  حدیث  پر بایں   الفا ظ  عنوا ن  قا ئم  کیا ہے  جو  شخص اپنے بھا ئی  کو بلا و جہ  کا فر کہتا ہے  وہ خو د کا فر  ہو جا تا ہے  وہ    امام بخا ر ی   رحمۃ اللہ علیہ   نے اس فتنہ  کی تبا ہ کا ر یوں کو بچشم  خو د ملا  حظہ  کیا تھا  اس لیے  وہ اپنی صحیح  میں اس  کے قوا عد  و ضو ا بط  کی طرف  اشا رہ کرتے ہو ئے  ایک عنوا ن  یو ں قا ئم  کر تے ہیں  ۔ اگر  کسی نے معقو ل  وجہ  کے پیش نظر یا نا دا نستہ  طور  پر کسی کو کا فر کہا کہنے  وا لا  کا فر  نہیں ہو گا ۔(کتا ب  الادب : باب 74،)

اس عنوا ن  کے تحت  امام المحد ثین  نے حضرت  عمر  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   کا وقعہ پیش کیا ہے   جب انہو ں نے حضرت حا طب  بن ابی  بلتعہ   رضی اللہ تعالیٰ عنہ   کے متعلق  کہا تھا  کہ یہ منافق  ہے اور  ان کے پا س  ہ کنے  کی معقول  وجہ  تھی  کہ یہ کا فر وں  سے  دوستی  رکھے ہو ئے ہیں اور ہما رے جنگی را ز اہل  مکہ  کو بتا تے  ہیں رسول  صلی اللہ علیہ وسلم   نے حضرت  عمر  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   کی غلط  فہمی  کو دور  فر مایا  لیکن مذکو رہ با لا  حدیث  کے پیش  نظر  آپ  نے حضرت عمر  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   کی تکفیر  نہیں  فر ما ئی  آپ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے فر ما یا  :  " کہ   عمر  ! تجھے  معلو م  ہو نا  چا ہیے  کہ اللہ  تعا لیٰ  نے  بدر  کو  عر ش  پر  سے   دیکھا  ہے اور  انہیں  مغفر ت  کا پروا نہ  عنا یت  فرما یا ہے ؛ ( صحیح  بخا ر ی  : کتا ب  ال د ب  با ب  74)

 اسی طرح  نا دا نستہ  طو ر  پر  کلمہ  کفر  کہنے  سے   انسا  ن کا فر   نہیں   ہو تا  چنانچہ   حضر ت  عمر  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   نے  ایک  دفعہ  دو را ن  سفر  اپنے  با پ  کی قسم  اٹھا ئی  اور غیر  اللہ  کی  قسم اٹھا  نا  کفر  یا شر ک  ہے لیکن  رسو ل  اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے  انہیں  تجد ید  ایمان  کے لئے  نہیں  کہا  بلکہ  ا ن  کی لا علمی کو دور  کر تے ہو ئے  فرمایا :  کہ اللہ  تعا لیٰ  نے تمہیں   با پ  دادہ کی قسم اٹھا نے کے لئے منع فر ما یا ہے ۔(صحیح  بخا ری : الا دب   4108)

امام بخا ر ی  رحمۃ اللہ علیہ  کے تر جمۃ البا ب  سے تکفیر  کے متعلق   دواصول  سا منے  آتے  ہیں ۔ (1) جہا لت اور لا علمی    کی وجہ  سے کو ئی  کفر یہ کا م  یا با ت  سر  زد ہو جا  ئے تو اسے معذ ور  خیا ل  کیا جا ئے  اور اسے  کا فر  کہنے   کی بجائے  اس کی  جہا لت  دور  کی جا ئے  اگر تمام  حجت  کے بعد  بھی اصرار  کرتا ہے  تو اس کے بطا ہر  کلمہ  گو  ہو نے  کا کو ئی  فا ئدہ نہیں  بلکہ وہ اصرار  اور عنا  د کی   وجہ  سے خا ر ج  از ملت ہو گا ۔

(2) اگر کو ئی کفریہ کا م یا با ت  کا مر تکب  اپنے پا س  کو ئی تا و یل  یا معقول  وجہ رکھتا ہے  تو بھی اسے معذور  تصور  کیاجا ئے  لیکن  تا و یل  کے  لیے  ضروری ہے کہ الفا ظ  میں عر بی  قا عدہ کے مطا بق  اس تا ویل  کی کو ئی گنجائش  ہو اور علمی  طور  پر  اس عمل  یا با ت  کی تو جیہہ  ممکن ہو ا اگر  کسی  کو اس کی تا ویل  یا معقول  وجہ  سے اتفا ق  نہ ہو  تو  اسے  کا فر  کہنے  کے بجا ئے  با ت  کے قا ئل  یا کا م  کے  فا عل  پر اس  تا ویل  یا معقو ل  وجہ  کا  بو د  اپن  وا ضح  کر دیا  جا ئے  امام  بخا ر ی  رحمۃ اللہ علیہ   کے پیش  کر دہ  اصو لو ں  کے  علا و ہ  چند  مز ید  ضوابط  بھی  ملا حظہ  فر ما ئیں :

(3) اگر کو ئی  انسا ن  مجبو ر  از کلمہ  کفر  یا  شر کیہ  عمل  کرتا  ہے تو   تو اسے  بھی  معذو ر سمجھنا  چا ہیے  ارشا د با ر ی تعا لیٰ  ہے : جو شخص  ایما ن  لا نے  کے بعد پھر  اللہ  کے سا تھ  کفر  کر ے  سوا ئے  اس شخص  کے جسے   مجبو ر  کیا گیا  ہو در  آنحا لیکہ  اس کا دل  ایما ن  پر مطمئن  ہو وہا ں  جس شخص  نے کفر   کے لئے  اپنا  سینہ  کھو ل  دیا ہو تو  ایسے  لو گو ں  پر اللہ کا غضب  نا ز ل  ہو گا  اور ان  کے لئے  بڑا عذا ب  ہے ۔(16۔النحل : 106)

اس آیت  کر یمہ  میں یہ بیا ن  کیا گیا  ہے کہ  جب  کسی  مسلما ن  پر  ان گنت  مظا لم  تو ڑ  ے جا رہے  ہوں  اور نا قا بل  برا دشت  اذیتیں  دے  کر کلمہ  کفر  پر مجبو ر  کیا جا  رہا  ہو تو  محض  جا ن  بچا نے  کے لئے  کلمہ  کفر  کہہ  دینے  کی رخصت  ہے  بشر طیکہ  دل  عقیدہ  کفر  سے محفو ظ  ہو ایسے  حا لا ت  میں اللہ  کے ہا ں  کو ئی  موا خذا  نہیں ہو گا  البتہ  مقا م  عز یمت  یہی ہے  کہ خوا ہ آدمی  کا جسم  تکا بو ٹی  کر  ڈا لا  جا ئے  بہر  حا ل  وہ کلمہ   حق کا ہی  اعلان  کر تا  رہے  حضرت  خبا ب  بن  رات  اور حضرت  بلال  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   اس مقا م  عزیمت  پر فا ئز  تھے  البتہ  حضرت  عما ر  بن  یا سر  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   نے رخصت  پر عمل  کیا ۔

(4) اگر انسا ن  پر شدت  خو ف لہ کیفیت  طا ری ہو اور  اس دہشت  کے عا لم میں  اگر  زبا ن  سے کلمہ  کفر  نکل  جا ئے  تو بھی  قا بل  موا خذ ہ  نہیں ہے جیسا کہ ایک آدمی نے  مر تے وقت  اپنے  بیٹوں  کو وصیت  کی تھی  کہ مر نے  کے بعد  میر ی لا ش  کو جلا د ینا  پھر اس کی را کھ  کو ہو ا   میں  اڑا  دینا  یا پانی   میں  بہا  دینا تا کہ اس طرح  میں اللہ کے حضو ر  پیشی  سے بچ  جا ؤ ں  گا  اس کا  یہ عقیدہ    تھا  کہ ایسا  کر نے  سے اللہ تعا لیٰ  مجھے  زندہ  نہیں کر سکے  گا  یہ کفر  یہ عقیدہ  ہے چو نکہ ما ر ے  دہشت  کے ایسا  ہو ا  اس لئے  اسے  معذور  سمجھتے  ہو تے  معا ف  کر دیا  گیا ۔ (صحیح  بخا ر ی : الا نبیا ء 3481)

(5)فرحت  و انبسا ط  کے عا لم  میں  انسا ن  اگر  اپنے  جذبا ت  سے مغلو ب  ہو کر  منہ  سے  کلمہ  کفر  کہہ دے  تو یہ  بھی قا بل  معا فی  ہے جیسا  کہ  ایک آدمی  دورا ن  سفر  پر اپنی سوا ری  زاد  سفر  کے سا تھ  گم  کر بیٹھا   نیند  کے بعد   جب  اس نے  او نٹنی  کو اپنے  سا منے   دیکھا  تو مار ے  خو شی کے بطو ر   شکر  یہ الفا ظ  کہتا  ہے ؛" اے اللہ ! میرا   بندہ  اور میں تیرا رب  ہو ں ۔(صحیح مسلم  : کتا ب  التو بہ  6960)

ان واقعا ت  کے  پیش  نظر  ہم  احباب  جما عت  کو نصیحت  کر تے ہیں میں مذکو رہ  خطیب  بڑ ی  خطر نا ک  فکر  کا  حا مل  ہے اسے  سمجھا یا  جا ئے  اگر وہ  ایسی  حر کا ت  سے با ز  آ جا ئے  تو  ٹھیک  بصورت  دیگر  اسے  خطا بت  سے معز ول  کر دیا جا ئے  سوال  میں  اس ذکر   کر دہ  آیت  کر یمہ پہلے  حکمرانوں  کے خلاف  استعما ل  کیا جا تا  تھا  اور اس   کی آڑ  میں  انہیں  کا فر  کہا  جا تا  تھا  اب  اس فکر  نے  تر قی  کی ہے  اور اسے  بنیا د  بنا  کر عا مۃ  النا س  کی  تکفیر  کی گئی ہے اس کے جوا ب  میں ہم  حضرت علی  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  کی با ت پیش  کر تے ہیں  جو انہوں  نے خو ارج  کے جو اب  میں کہی   تھی " با ت صحیح ہے لیکن  اس کا استعما ل  غلط  کیا گیا  ہے اگر  اس کاوہی  مطلب  جو خطیب  نے کشید کیا  ہے تو اس کی زد  میں یہ  خطیب  بھی آتے ہیں  ۔مثلاً  :حدیث  میں ہے  "کہ  جس  نے امیر  کی اطا عت  نہ کی  اور جما عت  سے الگ  ہو گیا  اگر اسی  حا لت  میں مو ت آئی تو جا ہلیت  کی مو ت  ہو گی ؛" (صحیح  مسلم :کتا ب  الا مارۃ )

کیا  بیعت  کے بغیر  زند گی  بسر  کر نا  حکم بغیر  " (مسا انذل  اللہ ) نہیں ہے  سقیفہ  بنی  سا عدہ  میں جب  حضرت  ابو بکر  صدیق  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   کی  بیعت  کی گئی  تو حضرت سعد  بن عبا د ہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ   اس سے الگ  تھلگ  رہے  پھر  وہ شا م  کے علا قہ  میں  چلے  گئے  اور وہیں  ان  کا انتقا ل  ہوا  کیا  اس حدیث  کے پیش  نظر  ان کی مو ت  بھی جا ہلا نہ  مو ت  تھی  ؟ اللہ تعا لیٰ  ہمیں  قرآن  و حد یث  کی نصوص  کو صحیح  طو ر  پر سمجھنے  کی تو فیق  دے (آمین )

ہمیں چا ہیے کہ ہم  اتمام  حجت  کے طو ر  پر دین  اسلام  کی  تر و یج  واشا عت  میں  لگے  رہیں  اور فتنہ  تکفیر  سے  اپنے  دا من  کو آ لو دہ  نہ  ہو نے د یں ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

 

فتاوی اصحاب الحدیث

جلد:1 صفحہ:36

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ