سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(712) جماع خون بند ہونے کے بعد ہی جائز ہے

  • 11088
  • تاریخ اشاعت : 2014-04-10
  • مشاہدات : 954

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیامرد کےلیےیہ جائز ہے کہ وہ ولادت کے تیس یا پنتیس دن اپنی بیوی سے مقاربت کرے یایہ صرف چالیس دن کےبعدہی جائز ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

مرد کے لیے یہ جائز نہیں ہے کہ وہ ولادت کے بعد ایام نفاس میں اپنی بیوی سےجماع کرےحتی کہ تاریخ ولادت کے بعد چالیس دن گزر جائیں ، البتہ اگر چالیس دن سے پہلےخون نفاس بند ہوجائے تو پھر عورت کے غسل کرنےکےبعد مقاربت جائزہےاور اگر چالیس دن سے پہلے دوبارہ خون آناشروع ہوجائےتو اسی وقت مباشرت حرام ہوجائےگی ۔ اگر خون چالیس دنوں کےبعد بھی جاری رہے تو وہ خون نفاس نہیں بلکہ استحاضہ کا خون ہوگا ،اس صورت میں عورت کو ہر نماز کےلیےوضو کرنا ہو گا اور اس کے شوہر کے لیے مباشرت کرنا جائز ہوگا ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج4ص538

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ