سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(453) تصویریں لٹکانا

  • 10818
  • تاریخ اشاعت : 2014-03-31
  • مشاہدات : 823

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

تصویریں لٹکانے کے بارے میں کیا حکم ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

دیواروں پر یا دفتروں  وغیرہ  میں لٹکانا مطلقاً جائز  نہیں ہے بلکہ واجب ہے کہ  انہیں مٹادیا جائے  کیونکہ نبیﷺ نے حضرت علی رضی اللہ عنہ  سے فرمایا تھا:’’ ہر تصویر کو مٹادو۔‘‘

تصویریں لٹکانے  کا نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ  انسان ان کی تعظیم کرنے اور  اللہ تعالیٰ کے سوا ان کی بھی عبادت  کرنے لگتا ہے  جبکہ  یہ تصویریں بادشاہوں 'لیڈروں  اور بڑے  لوگوں کی ہوں اور اگر  یہ تصویریں   عورتوں  اور بچوں کی ہوں  تو پھر بھی  یہ فتنہ سے خالی نہیں ہیں۔

ھذا ما عندي واللہ أعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج4ص346

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ