سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

نماز میں تاخیر

  • 10348
  • تاریخ اشاعت : 2014-03-02
  • مشاہدات : 448

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ایک شخص جو سو یا رہتا ہے اور نماز فجر کو ظہر سے قریباً دو گھنٹے پہلے ادا کر تا ہے اس کے با ر ے میں کیا حکم ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

عذر کے بغیر نماز کو وقت سے مؤ خر کر کے ادا کر نا جا ئز نہیں اور نیند ہر شخص کے لئے عذر نہیں بن سکتی کیو نکہ انسا ن کے لئے یہ ممکن ہے کہ وہ جلد ی سو ئے تا کہ نماز کے لئے جلد بیدا ر ہو سکے اسی طرح یہ بھی ممکن ہے کہ وہ اپنے وا لدین یا کسی بھا ئی یا پڑ وسی وغیرہ سے کہہ دے کہ وہ اسے بیدا ر کر دے علاوہ ازیں آدمی کو خو د بھی چا ہئے کہ نماز کا اس قدر خیا ل کر ے اور نماز کو دل میں اس طرح جگہ دے کہ جب وقت قر یب ہو تو دل میں خو د بخود احسا س پیدا ہو جا ئے خوا ہ آدمی سو یا ہو ا ہی کیو ں نہ ہو لہذا جو شخص ہمیشہ نماز فجر کو ضحیٰ کے وقت میں ادا کرتا ہے تو اس کے معنی یہ ہیں کہ اس کے دل میں نماز کا ہر گز اہتمام نہیں ہے بہر حا ل انسا ن کو حکم یہ ہے کہ جہا ں تک ممکن ہو  وہ نماز کو زیا دہ سے زیادہ قریب وقت میں ادا کر ے اور اگر سو یا ہو ا ہے تو اٹھ کر جلد پڑ ھ لے اسی طرح جو بھو ل گیا ہو اسے جب یا د  آئے فو ر اً پڑ ھ لے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج1ص402

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ