سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(698) پیشہ وکالت

  • 10082
  • تاریخ اشاعت : 2014-02-17
  • مشاہدات : 792

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

اسلامی شریعت کا پیشہ وکالت کے بارے میں کیا حکم ہے؟ مولانا مودودیؒ نے اپنی کتاب’’اسلامی قانون اور اس کے نفاذ کے طریقے‘‘ کے آخر میں اس پیشے کے بارے میں جو کچھ  لکھا ہے، اس کے بارے میں آپ کی کیا رائے ہے؟رہنمائی فرمائیں:۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

پیشہ وکالت میں کوئی حرج نہیں کیونکہ یہ بھی دیگر وکلاء کی طرح دعویٰ اور جواب دعویٰ میں وکیل بنانے کے مترادف ہے بشرطیکہ وکیل طالب حق ہو اور قصد و ارادہ سے جھوٹ نہ بولے۔

مولانا مودودیؒ کی جس مذکورہ کتاب کا حوالہ دیا گیا ہے، اسے میں نے نہیں دیکھا۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج3ص557

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ