سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(670) کیا غیر اللہ کے لئے نذر ماننا شرک ہے؟

  • 10055
  • تاریخ اشاعت : 2014-02-17
  • مشاہدات : 535

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
غیر اللہ کیلئے نذر ماننے کے بارے میں کیا حکم ہے؟

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

غیر اللہ کیلئے نذر ماننے کے بارے میں کیا حکم ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

غیر اللہ کیلئے نذر شرک ہے کیونکہ اس میں جس کیلئے نذر مانی جائے اس کی تعظیم و تقرب ہے اور اسے پورا کرنا اس کی عبادت کے مترادف ہے۔ اگر نذر کا تعلق اطاعت و عبادت سے ہو تو پھر بہت سے دلائل کی روشنی میں یہ واجب ہے کہ اسے صرف اور صرف اللہ وحدہ کے لئے ادا کیا جائے مثلاً ارشاد باری ہے:

﴿وَما أَر‌سَلنا مِن قَبلِكَ مِن رَ‌سولٍ إِلّا نوحى إِلَيهِ أَنَّهُ لا إِلـٰهَ إِلّا أَنا۠ فَاعبُدونِ ﴿٢٥﴾... سورةالأنبياء

’’اور جو پیغمبر ہم نے تم سے پہلے بھیجے ان کی طرف یہی وحی بھیجی کہ میرے سوا کوئی معبود نہیں تو میری ہی عبادت کرو‘‘۔

لہٰذا غیر اللہ کیلئے نذر ماننا شرک ہے۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج3ص535

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ