سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(46) اگر کوئی کسی مشرک کا جنازہ واسطے دفعہ فتنہ کے پڑھ لے اور..الخ

  • 4237
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-16
  • مشاہدات : 467

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

اگر کوئی کسی مشرک کا جنازہ واسطے دفعہ فتنہ کے پڑھ لے اور صرف تکبیریں کہے، اور دعائیں نہ پڑھے، کیونکہ اگر جنازہ سے انکار کرتا ہے تو لوگ گائوں سے نکالتے ہیں، تو اس کے لیے کیا حکم ہے، جائز ہے یا منع ہے۔ بینوا توجروا۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

نماز جنازہ مشرکین و مجاہرین کسی صورت جائز نہیں۔

{قال اللّٰہُ تَعَالٰی اِنَّمَا الْمُشْرِکُوْنَ نَجَسٌ قَالَ اللّٰہَ لَا یَغْفِرُ اَنْ یُّشْرَکَ بِہٖ وَیَغْفِرُ مَا دُوْنَ ذٰلَکَ لَمِنْ یشائ

’’اللہ تعالیٰ نے فرمایا مشرک ناپاک ہیں اور فرمایا اللہ کسی کو شرک نہیں بخشے گا اور اس کے علاوہ اور گناہ جس کو چاہے بخش دے۔‘‘

پس جب مشرک ہر گز مغفور نہیں تو اس کے لیے جنازہ (کہ سراسر استغفار ہے) لغو ہو گا۔ اور اللہ تعالیٰ نے اپنے رسول کو جب منافقین کے جنازے سے منع کیا تو مشرک کا بطریق اولیٰ ممنوع ہو گا۔

{قَالَ اللّٰہُ تَعَالٰی وَلَا تَصَلَّ عَلٰی اَحدٍ مِنْہُمْ مَاتَ اَبَدًا وَّلَا تُقُمْ عَلٰی قَبْرِہٖ}

’’اللہ تعالیٰ نے فرمایا اگر ان میں سے کوئی مر جائے تو اس کی نماز نہ پڑھ اور اس کی قبر پر بھی نہ جا۔‘‘

تنبیہ:

… باقی ایسے امور میں انسان کو ڈرنا چاہیے کہ اگر مشرک کا جنازہ وغیرہ نہ پڑھوں گا تو گائوں سے یا دیار شہر سے نکالا جائوں گا۔ بلکہ دلیر ہو کر جہاں تک ہو۔ اتباع سنت کا خیال رکھنا چاہیے۔

{قَالَ اللّٰہ تَعَالٰی لَقَدْ کَانَ لَکُمْ فِیْ رَسُوْلِ اللّٰہِ اُسْوَۃٌ حَسَنَۃٌ لِمَنْ کَانَ یَرْجُوْا اللّٰہَ وَالْیَوْمَ الْاٰخِرَ وَذَکَرَ اللّٰہَ کَثِیْرًا}

’’اللہ تعالیٰ نے فرمایا اللہ کے رسول میں اسی آدمی کے لیے بہترین نمونہ ہے جو اللہ پر اور آخرت پر ایمان رکھتا ہو، اور اللہ کی یاد میں بکثرت مشغول رہتا ہو۔‘‘

فقط واللہ اعلم بالصواب والیہ المرجع والماب حررہ العبد الضعیف الراجی رحمۃ ربہ القوی ابو حریر عبدا لعزیز الملتانی عفر اللہ لہ والوالدیہ واحسن الیہما والیہ الجواب صحیح والرائے نجیح۔

(سید محمد نذیر حسین ۱۲۸۱) (سید محمد عبد السلام ۱۲۹۹) (سید محمد ابو الحسن ۱۳۰۵) (ابو سعید محمد حسین ۱۲۰۹ٍھ) (فتاویٰ نذیریہ جلد نمبر۴ ۱ ص ۶۴۶)


فتاویٰ علمائے حدیث

جلد 05 ص 87

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ