سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(166) ناظرہ کا امام کے پیچھے قرآن کھول کر رکھنا کیسا ہے؟

  • 4129
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-14
  • مشاہدات : 359

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

حافظ قرآن امام تراویح کے پیچھے ناظرہ خواں نیت باندھ کر اپنے سامنے قرآن کھول کر رکھ دیتے ہیں۔ اگر حافظ بھول جاتا ہے۔ یا بھٹک جاتا ہے۔ تو یہ ناظرہ خواں اس کو بتا دیتے ہیں۔ اور خود ہی ورق بھی الٹتے ہیں کیا ناظرہ خواۃ کا یہ فعل جائز ہے یا نہیں؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کے غلاز ذکوان حضرت عائشہ رضی اللہ عنہ اور بعض دیگر صحابہ و تابعین کو قرآن دیکھ کر تراویح کی نماز پڑھاتے تھے۔ ((ابو داؤد فی کتاب المصاحب وابن ابی شیبۃ والشافعی وعبد الرزاق)) اسی اثر کی رو سے امام اعظم یعنی امام مالک رحمہ اللہ اور صاحبین کے نزدیک غیر حافظ شخص کا قرآن سے تراویح پڑھانا جائز ہے، لیکن امام ابو حنیفہ رحمہ اللہ وابن حزم اور بعض دیگر ائمہ کے نزدیک ناجائز ہے، اور اس سے نماز فاسد ہوجاتی ہے۔

((لکونہ عملاً کثیراً ولان عمر کان ینہٰی عنہ۔ العینی۔ وتاول اثر عائشۃ بعض الحنفیۃ انہ کان یحفظ من المصحف فی النھار ویقرأۃ فی اللیل فی الصلوۃ عن ظہر قلب))

بعض لوگ اس اثر کو سامنے رکھ کر امام تراویح کے پیچھے ناظرہ خواں کے قرآن کھول کر سامنے رکھنے۔ اور اوراق اُلٹنے اور بوقت نسیان امام کو تلقین کرنے کو جائز قرار دیتے ہٰں۔ لیکن مجھے اس کے جواز میں تامل و تردد ہے قرون ثلثہ دلہا بالخیر میں … اس کی نظر نہیں ملتی اور جو صورت منقول ہے، قطع نظر اُس بات کے کہ وہ محض ایک اثر ہے، اس کے خلاف حضرت عمر رضی اللہ عنہ کا ایک قول مروی ہے، و نیز اس کے جواز میں عند الائمۃ اختلاف ہے، پس اس پر صورت مسئولہ کا قیاس کرنا محل تامل ہے۔

(محدث دہلی جلد نمبر ۹ شمارہ نمبر ۴)

 

فتاویٰ علمائے حدیث

جلد 06 ص 353

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ