سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(192) خصی جانور کی قربانی

  • 17518
  • تاریخ اشاعت : 2016-12-20
  • مشاہدات : 166

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

خصی جانور کی قربانی جائز ہے یانہیں؟یہاں اس چیز کی بحث چھڑی ہوئی ہے ۔جواب قرآن وحدیث سے دیا جائے؟کسی مجتہد یافقیہ کاقول معتبر نہ ہوگا؟۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

خصی جانور کی قربانی بلاشک وشبہ جائز ہے آں حضرت ﷺنےخصی اورغیر خصی دونوں کی قربانی کی ہے۔ عن جابر بن عبدالله قال:ذبح النبى صلى الله عليه وسلم يوم الذبح كبشين اقرنين موجوئين الخ(اخرجه ابو اداوود وابن ماجه والدارمى  )وعن ابي سعيد الخدرى رضى الله  عنه قال :ضحى رسول الله صلى الله عليه وسلم بكبش أقرن مخيل الخ(اخرجه الترمذى وابوادو والنسائي وابن حبان)پہلی حدیث سے معلوم ہوا کہ آپ نےخصی کی قربانی کی ہے۔

علامہ شوکانی دوسری حدیث کی شرح میں فرماتے ہیں:

فيه ان النبى صلى الله عليه وسلم ضحى بالفحيا كما ان ضحى بالخصى(نيل الاوطار5/209)
 ھذا ما عندی والله اعلم بالصواب

فتاویٰ شیخ الحدیث مبارکپوری

جلد نمبر 2۔کتاب الأضاحی والذبائح

صفحہ نمبر 393

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ