سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(418) کیا نمازِ تسبیح ثابت ہے یا نہیں؟

  • 4786
  • تاریخ اشاعت : 2013-06-25
  • مشاہدات : 524

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا نمازِ تسبیح ثابت ہے یا نہیں؟             (محمد حسین، کراچی)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

حافظ ابن حجر عسقلانی الأجوبۃ عن أحادیث المصابیح میں حدیث صلاۃ تسابیح کے متعلق لکھتے ہیں:(( فأما حدیث ابن عباس فجاء عنہ من طرق أقواہا ما أخرجہ أبو داؤد ، وابن ماجہ ، وابن خزیمۃ ، وغیرھم من طریق الحکم بن أبان عن عکرمۃ عنہ ، ولہ طرق أخری عن ابن عباس من روایۃ عطاء ، وأبی الجوزاء ، وغیرھما عنہ۔

وقال مسلم فیما رواہ الخلیلی فی الإرشاد بسندہ عنہ: لایروی فی ھذا الحدیث إسنادہ أحسن من ھذا۔ وقال أبوبکر بن أبی داؤد عن أبیہ: لیس فی صلاۃ التسبیح حدیث صحیح غیرہ۔

وقال ابن حجر فی آخر مبحث حکم حدیث صلاۃ التسبیح من الأجوبۃ: وقد وقع فیہ مثال ما تناقض فیہ المتأولان فی التصحیح والتضعیف ، وھما الحاکم ، وابن الجوزی ـ فإن الحاکم مشہور بالتساھل فی التصحیح ، وابن الجوزی مشہور بالتساہل فی دعوی الوضع ـ کل منھما حکم علی ھذا الحدیث ، فصرح الحاکم بأنہ صحیح ، وابن الجوزی بأنہ موضوع ، والحق أنہ فی درجۃ الحسن لکثرۃ طرقہ التی یتقوی بھا الطریق الأولی۔ واللّٰہ أعلم۔ ))  

وقال المحدث الألبانی فی التعلیق علی المشکاۃ: أبو داؤد رقم (۱۲۹۷) وابن ماجہ (۱۳۸۷) بإسناد ضعیف فیہ موسٰی بن عبدالعزیز ثنا الحکم بن أبان ، وکلاھما ضعیف من قبل الحفظ ، وأشار الحاکم (۱؍۳۱۸) ثم الذہبی إلی تقویتہ ، وھو حق ، فإن للحدیث طرقا وشواہد کثیرۃ یقطع الواقف علیھا بأن للحدیث أصلا أصیلا خلافا لمن حکم علیہ بالوضع ، أو قال: إنہ باطل۔ وقد جمع طرقہ الخطیب البغدادی فی جزء ، وھو مخطوط فی المکتبۃ الظاہریۃ بدمشق ، وقد حقق القول علیہ العلامۃ أبو الحسنات اللکنوی فی: الآثار المرفوعۃ فی الأخبار الموضوعۃ (ص:۳۵۳؍ ۳۷۴) فلیراجعہ من شاء البسط ، فإنہ یغنی عن کل ماکتب فی ھذا الموضوع ، وقد أشار المؤلف إلی تقویتہ أیضا بذکرہ طریق أبی رافع عقبہ ، وانظر أجوبۃ الحافظ ابن حجر حول ھذا الحدیث ، وأحادیث أخری مبسوطۃ فی آخر ھذا الکتاب۔ ۱ ھ

[خلاصہ یہ ہے کہ نمازِ تسبیح احادیث سے ثابت ہے اور وہ احادیث قابل حجت ہیں۔ ]

                                                          ۱۷ ؍ ۱۰ ؍ ۱۴۲۲ھ

۱:… (( قال الشیخ الألبانی رحمہ اللّٰہ تعالیٰ فی تعلیق المشکاۃ: وأشار الحاکم (۱؍۳۱۸) ثم الذہبی إلی تقویتہ ، وھو حق ـ إلی قولہ: وقد أشار المؤلف إلی تقویتہ أیضا بذکرہ طریق أبی رافع عقبہ وانظر أجوبۃ الحافظ ابن حجر حول ھذا الحدیث ، وآٔحادیث أخری مبسوطۃ فی آخر الکتاب۔ ۱ ھ (۱؍۴۱۹)

وقال الحافظ ابن حجر رحمہ اللّٰہ تعالی فی تلک الأجوبۃ بعد أن أشبع الکلام علی حدیث صلاۃ التسبیح وطرقہ الموصولۃ والمرسلۃ: والحق أنہ فی درجۃ الحسن لکثرۃ طرقہ التی یقوی بھا الطریق الأولی۔ واللّٰہ أعلم۔ ۱ ھ (۳؍۱۷۸۲)

وقد قال فی بیان الطریق الأول: وقال مسلم فیما رواہ الخلیلی فی الإرشاد بسندہ عنہ: لایروی فی ھذا الحدیث إسناد أحسن من ھذا۔ وقال أبوبکر بن أبی داؤد عن أبیہ لیس فی صلاۃ التسبیح حدیث صحیح غیرہ۔ ۱ ھ (۳؍۱۷۱۸۱) ))

۲:… (( قال الدار قطنی فی سننہ:حدثنا أحمد بن محمد بن أبی بکر الواسطی ، ثنا عبیداللّٰہ بن سعد ، حدثنی عمی، ثنا ابن أخی الزہری عن عمہ ، أخبرنی سالم: أن عبداللّٰہ قال: کان رسول اللّٰہ  صلی الله علیہ وسلم إذا قام إلی الصلاۃ رفع یدیہ حتی إذا کانتا۔ الحدیث ، وفی آخرہ: ویرفعھما فی کل رکعۃ وتکبیرۃ یکبرھا قبل الرکوع حتی ینقضی صلاتہ۔ ۱ ھ (۱؍۲۸۹) فھذہ الجملۃ: ویرفعھما الخ تفید أن رسول اللّٰہ  صلی الله علیہ وسلم کان یرفع یدیہ فی تکبیرات العید لأنھا قبل الرکوع وکان رسول اللّٰہ  صلی الله علیہ وسلم یرفع یدیہ فی کل تکبیرۃ یکبرھا قبل الرکوع۔ واللّٰہ أعلم۔  ))                                             ۸ ؍ ۶ ؍ ۱۴۲۳ھ

 

قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام ومسائل

جلد 02 ص 350

محدث فتویٰ

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ