سرچ انجن کی نوعیت:

تلاش کی نوعیت:

تلاش کی جگہ:

(842) اللہ کے ناموں کا وسیلہ دے کر دعا کرنا

  • 5210
  • تاریخ اشاعت : 2024-05-23
  • مشاہدات : 1227

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا اس طرح دعا کی جا سکتی ہے۔؟ یا اللہ تجھے تیرے وحدہ لا شریک ہونے کا واسطہ۔ تو مجھے فلاں چیز عطا فرمادے۔ یا اللہ تجھے اس بات کا واسطہ کہ تیرے سوا کوئی معبود نہیں۔تو مجھے فلاں چیز عطا فرمادے۔؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

جی اللہ تعالی کے تمام ذاتی وصفاتی ناموں کا وسیلہ دے کر اللہ سے دعا کی جا سکتی ہے ،یہ مشروع وسائل میں سے ایک وسیلہ ہے۔ارشاد باری تعالیٰ ہے۔

’’ وللہ الأسماء الحسنیٰ فادعوہ بھا ‘‘ (الأعراف:180)۔

”اور اللہ کے اچھے اچھے نام ہیں ، لہٰذا انہی کے ذریعے اللہ تعالیٰ سے دعا کرو“ ۔

یعنی اللہ تبارک وتعالیٰ سے اس کے پیارے ناموں کے وسیلے سے دعا کرو، اللہ کے اسماء حسنیٰ میں اللہ کے اوصاف عالیہ بھی داخل ہیں۔

نبی کریمﷺ جب پناہ مانگتے تو کہتے:

”اللھم اني أعوذبعزتک لا الہ الا أنت أن تضلنی․․․“ (متفق علیہ)۔

” اے اللہ! میں تیری عزت کے وسیلے سے پناہ چاہتا ہوں ،تیرے سوا کوئی معبود بر حق نہیں، کہ تو مجھے گمراہ کرے․․․“۔

حضرت انس رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ جب نبی کریم ﷺکو کوئی غمناک امر در پیش ہوتا تو آپ فرماتے:

” یا حي یا قیوم برحمتک أستغیث“ (ترمذی ، بسند حسن)۔

”اے زندہ ! اے تھامنے والے! تیری رحمت کے واسطے سے فریاد کرتاہوں“۔

مذکورہ بالا اور ان جیسے دیگر دلائل سے یہ بات معلوم ہوتی ہے کہ اسماء وصفات الٰہی کے وسیلے سے دعا کرنا جائز، مشروع اور مستحب ہے ، جیسا کہ نبی کریم ﷺ کیا کرتے تھے۔

ھذا ما عندی واللہ ٲعلم بالصواب

قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام ومسائل

جلد 02

ماخذ:مستند کتب فتاویٰ