فتاویٰ جات: تذکرہ مشاہیر
فتویٰ نمبر : 8591
(222) کتا ب سیرت ملک سیف بن ذی یزن
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 16 December 2013 02:11 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

میں نے  کتا ب  سیرت  ملک  سیف  بن ذی یزن  ص (185/جلد  دوم  میں پڑ ھا  ہے  کہ با دشا ہ  سیف  ایک  علا قے  میں  گیا  جہا ں  اس نے  ایک آدمی  کو پا یا  اور جب  اس سے اس کا نا م پو چھا  تو اس نے اپنا نا م  خضر  بتا یا   خضر   نے  با دشا ہ   سیف کو ا یک  بہت ہی خو بصورت  علا قہ  دکھا یا  جس کا نا م  سفید  جز یرہ تھا اور وہ وہیں قیا م کئے ہوئے تھا کیو نکہ  اس میں  بہت  سے عجا ئبا ت تھے مثلا  یہ  کہ وہا ں  ہر را ت  آسمان  کا ایک  دروا زہ  کھلتا  تھا   جس سے اللہ کے فرشتے نا زل ہو تے  اور اللہ تعا لی  کے حکم  سے  زمین  میں تصرف  کر تے تھے   خضر نے با دشا ہ کو   بتا یا کہ اس   جزیرے  کے پیچھے   نو ر  ہے   اور اس نو ر کے پیچھے   تا ریکی ہے   جو دنیا کو گھیرے ہو ئے ہے   اور اس کے بعد ایک پہا ڑ ہے   جس کا نا م "فدا"ہے  اور وہ حلقہ کی طرح گو ل ہے   اور پو ری دنیا کو  گھیر ے  ہو ئے  ہے    اور آسما ن  اس پر  سوری  کئے ہو ئے  ہے  اور اللہ تعا لی  کی  قدرت   سب  کا احا طہ  کئے  ہو ئے ہے  پہا ڑ  کے  پیچھے  ایک  ایسی  مخلوق  ہے  جو  نہ انسا ن  اور نہ جن ---- سوال  یہ ہے  کہ  کیا  یہ با تیں  سچی  اور صحیح ہیں ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

یہ داستا ن  بے اصل ہے  اس کی کو ئی  دلیل نہیں   لہذا اس کی تائید  کر نا  اور اسے  اسلا می  عقائد  میں داخل کر نا  جا ئز  نہیں  ہے علما ء  نے ذکر فر ما یا ہے   کہ حضرت خضر کے حوا لہ سے  جو حکا یا ت  بھی  بیا ن  کی  جاتی  ہیں  وہ  بے  بنیا د ہیں  کیو نکہ حضرت خضر کا بھی  دیگر  بندگا ن  الہی  کی طرح  انتقا ل  ہو  چکا  ہے  اگر  وہ  مو جو د   ہوتے   تو ہما رے نبی حضرت محمد ﷺ  کی خد مت  میں ضرور  حا ضر  ہو تے  کیو نکہ  آپ ﷺ  کو انس  و جن  سب کی طرف  معبوث کیا گیا  ہے ۔ مذکو ر ہ کتا ب  خرا فا ت  اور جھوٹی  با تو ں  پر  مشتمل   ہے  جو کہ  با لکل  بے اصل  ہیں  اس کا  مصنف  بھی ایک  گمنام  آدمی  ہے یا وہ "حا طب   لیل "(را ت  کو  ایندھن  اکٹھا  کر نے  والا ) ہے  کہ وہ جو کچھ دیکھتا ہے   اسے بلا تحقیق  نقل  کر دیتا  ہے  یا لو گو ں کو مشغول   رکھنے     کے لئے  اپنے  تخیل  سے   عجا ئبا ت  دنیا  کے با ر ے میں  باتیں  وضع  کر تا  ہے اللہ تعا لی   کی قدرت   اور مخلو قا ت  کے با ر ے میں  اس کے احا طہ کی وسعت   میں  کو ئی   شک نہیں لیکن ان  خرا فا ت  و ہفوات کا کو ئی  سرپائو ں نہیں  لہذا  یہ اس  قا بل  ہیں  کہ انہیں مٹا دیا جا ئے  اور تلف  کر  دیا جا ئے ۔

هذا ما عندي والله اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج1 ص38

(0 ووٹس)
یہ مضمون مددگار رہا
یہ مضمون غیر مددگار رہا

[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)