فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 8590
(221) ارض فدک کا قصہ
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 16 December 2013 02:09 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

میرے ہا تھ میں (فدک  فی  التا ریخ)"فدک  تاریخ کے  آئینہ  میں "نا می  ایک  کتا ب  آئی  جس  کا  مئو لف   دونو ں  خلیفوں  حضرت ابو بکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ  کو( نعوذ با للہ ) کا فر قرار دیتا ہے   اس کتا ب  کے بار ے  میں شرعی  حکم کیا ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

رافضیوں (لعنهم الله)کا عقیدہ ہے  کہ دوسرے انسا نوں کی  طرح  نبی  کر یم  ﷺ کا ما ل  بھی  آپ  کے وارثوں  میں  تقسیم  ہو نا چا ہئے  تھا  لیکن حضرت  ابو بکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ   نے  ازرا ہ  ظلم  حضرت فا طمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ  کو ان  کی وراثت  سے محروم  کیا اور  پھر حضرت  عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ  نے بھی   حضرت ابوبکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ  کی پیروی  کی جب کہ مدینہ  کے قریب  فدک  نا می  رقبہ  نبی ﷺ  کی ملکیت  تھا  لیکن  حضرت  ابو بکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ   نے اس  میں تصرف کیا  اور اسے  اپنی   ملکیت  میں لے لیا  یا اسے  انہوں  نے  بیت الما ل  میں دا خل  کر دیا  اس  کتا ب  کا مصنف  خبیث عقیدے کا ما لک   ایک  رافضی  ہے اس  سے اور اس کے کذب و بہتا ن سے ہٹ کر  دور  رہنا  واجب ہے کیو نکہ  نبی ﷺ نےتو خو د  ارشا د  فر ما یا  تھا کہ:

لا نورث مر تركنا صدقة (صحيح بخاري  ح:٥٣٥٨)

"ہما ر ا  ما ل  وارثوں  میں تقسیم نہیں ہو تا بلکہ ہمار ا ترکہ تو صدقہ ہو تا ہے''

حضرت ابوبکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ   نے اس زمین کے سا تھ   وہی  معا ملہ کیا  جو رسول اللہ ﷺ اپنی  حیا ت  پا ک  میں کیا  کر تے تھے ۔پھر  حضرت عثما ن رضی اللہ تعالیٰ عنہ  حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ   اور حضرت حسن رضی اللہ تعالیٰ عنہ   نے بھی  اس کے  سا تھ  وہی  معا ملہ  کیا  لیکن  اس  کا  کیا کیا  جا ئے  کہ  روا فض  عقل  سے کا م  نہیں  لیتے  ۔

هذا ما عندي والله اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج1 ص38

(0 ووٹس)
یہ مضمون مددگار رہا
یہ مضمون غیر مددگار رہا

[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)