فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 8583
(214) فتوی ٰکے با ر ے میں خبر دینے میں کو ئی حرج نہیں
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 16 December 2013 01:53 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

طلبہ  ایک ایسے  استا د  سے   فتوی   پوچھتے   ہیں ۔ جس  کے پا س منا سب  علم  تو  ہے  لیکن  وہ  فتوی  دینے  کا اہل نہیں ہے  ہا ں البتہ  اس طرح  کے سوال کا اس  نے  بعض  ثقہ  علماء  سے  جوا ب ضرور   سن رکھا   ہو تا ہے تو کیا  اس کے لیے  یہ جا  ئز  ہے کہ  وہ  طلبہ  کو  یہ   فتوی   یا ضروری   ہے  کہ جوا ب   کو صا حب   فتو ی  کی طرف منسو ب  کیا جا ئے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

جب کسی  ایسے  شخص  سے سوال  کیا  جا ئے   جس   کے فتوی دینے کی اہلیت نہ ہو  اور اسے معتبر  علماء  کا فتوی  یا د ہو تو اس فتوی  کے بتا نے میں کوئی حرج  نہیں لیکن جوا ب کو  اپنی طرف منسو ب نہ کر ے  بلکہ یہ کہے کہ میں نے فلاں شخص کو اس کا یہ فتوی  دیتے  ہو ئے سنا ہے جب کہ اسے وہ فتوی  بغیر شک و شبہ  کے یا د ہو ۔

هذا ما عندي والله اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج1 ص38

(1 ووٹس)
یہ مضمون مددگار رہا
یہ مضمون غیر مددگار رہا

[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)