فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 8264
فرقئہ ہبریہ کا تعارف
شروع از بتاریخ : 14 November 2013 09:26 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ہمارے ملک الجزائر میں تصوف کے دو سلسلے پائے جاتے ہیں ‘ جو ا پنے بڑے شیخ ’’پیر ہبری‘‘ کی نسبت سے ’’ہبری‘‘ کہلاتے ہیں۔ ان کے متعلق شریعت اسلامی کا کیا حکم ہے؟ ان کے شیخ ’’محبوب حضرت‘‘ کے نام سے معروف ہیں۔ ان لوگوں کا عقیدہ یہ ہے کہ صرف ہبری لوگ ہی سیدھے راستے پر ہیں باقی تمام مسلمان گمراہ ہیں۔ کیا یہ سلسلئہ طریقت صحیح ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد! 

صحیح محفوظ راستہ وہی ہے جس پر جناب نبی اکرمﷺ اور آپ کے صحابہ کرام رضی الله عنہم گامزن رہے۔ جو شخص ان کی پیروری کرے گاوہی سیدھے راستے پر ہوگا۔ دوسرے طرق جو بعد میں ایجاد ہوئے ہیں انہیں شریعت اسلامی کی روشنی میں رکھا جائے گا۔ جو بات شریعت کے مطابق ہوگی قبول کی جائے گی‘ جو خلاف ورزی ہوگی رد کردی جائے گی‘ کیونکہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے:

{وَ اَنَّ ہٰذَا صِرَاطِیْ مُسْتَقِیْمًا فَاتَّبِعُوْہُ وَ لَا تَتَّبِعُوا السُّبُلَ فَتَفَرَّقَ بِکُمْ عَنْ سَبِیْلِہ ذٰلِکُمْ وَصّٰکُمْ بِہ لَعَلَّکُمْ تَتَّقُوْنَ} (الأنعام۶,۱۵۳)

’’بلاشبہ یہی میرا طریقہ ہے جو (بالکل) سیدھا ہے‘ لہٰذا تم اس کی پیروی کرو اور (دوسری) راہوں کی پیروی نہ کرو‘ورنہ وہ تمہیں اس (اللہ) کے راستے سے جدا کردیں گے۔ اس نے تمہیں نصیحت کی ہے تاکہ تم بچ جاؤ۔ ‘‘

ہم آپ کو نصیحت کرتے ہیں کہ کثرت سے قرآن مجید کی تلاوت کیا کریں ‘ تفسیر کی کتابوں۔ خصوصاً ابن جریر اور ابن کثیر کی تفسیروں کا مطالعہ کریں۔ حدیث کی کتابوں اور ان کی شروحات پڑھیں خصوصاً صحیحین یعنی صحیح بخاری اور صحیح مسلم ‘ اور سنن اربعہ اور حدیث کی کتابیں۔ مثلاً منتقی الأخبار‘ بلوغ المرام‘ ریاض الصالحین‘ اور ابن قیم رحمتہ الله علیہ کی کتاب زاد المعاف في خیر المعاد پڑھیں۔

وَبِاللّٰہِ التَّوْفِیْقُ وَصَلَّی اللّٰہُ عَلٰی نَبِیَّنَا مُحَمَّدٍ وَآلِہ وَصَحْبِہ وَسَلَّمَ

اللجنة الدائمة۔ رکن: عبداللہ بن قعود، عبداللہ بن غدیان، نائب صدر: عبدالرزاق عفیفی، صدر عبدالعزیز بن باز

 

 

فتاوی بن باز رحمہ اللہ

جلددوم -صفحہ 235

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)