فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 655
(119) علم ماکان ومايکون
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 07 May 2012 10:00 AM

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کوعلم  ماکان ومایکون تھا یانہیں؟حالانکہ ایک روایت میں آتاہے :

«قال رسول اللہ صلی اللہ علیه وسلم انی رأیت ربی عزوجل فی احسن صورۃ قال فیم یختصم الاعلی قلت انت اعلم فوضع کفه بین کتفی فوجدت بردهامابین تدییّفعلمت مافی السموات والارض» ۔الحدیث مشکوۃ جلد1ص 69۔70

اس حدیث میں صریح ظاہرہے کہ آپ کوعلم ماکان ومایکون تھا۔اورآپ صلی اللہ علیہ وسلم عالم غیب السموات والارض تھے۔؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد! 

آپ کوعلم ماکان ومایکون نہیں ۔ اورحدیث فیم یختصم الاعلی سے صرف آسمان وزمین میں موجود اشیاء کا علم کلی معلوم ہوتاہے۔ جو ہوچکی ہیں یا آئندہ ہونے والی ہے۔ ان کاعلم ثابت نہیں ہوتا۔اور اس کی مؤیدبخاری كی حدیث کوثربھی ہے۔ جو جواب نمبر5میں گزرچکی ہے ۔اور آیات و واقعات اور دیگراحادیث سے بھی یہی ثابت ہوتاہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کوبعض اشیاء کاعلم ہے نہ کہ خدا کی طرح کل اشیاء کا۔چنانچہ چندامثلہ جواب نمبر1میں گزرچکی ہیں۔

وباللہ التوفیق

فتاویٰ اہلحدیث

کتاب الایمان، مذاہب، ج1ص220 

محدث فتویٰ 



تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)