فتاویٰ جات: عبادات
فتویٰ نمبر : 2877
(520) فرض نماز کے بعد دعا کا معمول بنانا صحیح نہیں
شروع از بتاریخ : 24 March 2013 11:20 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ایک مسجد کے اندر نمازیوں نے یہ معمول بنا رکھا ہے کہ ہر نماز کے وقت کوئی نہ کوئی مقتدی امام سے کہتا ہے امام صاحب دعا کرائیں کیا ایسے مقام پر دعا کروانا جائز ہے یا نہیں؟


 

الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

معمول بنانا درست نہیں، کبھی کبھار اتفاقا کوئی مطالبہ کرے تو ہاتھ اٹھاکر دعا کرسکتے ہیں، پھر اس کی فرض نماز کے بعد یا قبل کے ساتھ بھی کوئی تخصیص نہیں ان دو اوقات کے علاوہ مطالبہ ہو تو اس وقت بھی آپ ہاتھ اٹھا کر دعاء کرسکتے ہیں۔                               

 

فتاویٰ علمائے حدیث

کتاب الصلاۃجلد 1

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)