فتاویٰ جات: علاج ومعالجہ
فتویٰ نمبر : 26532
(884) بیماریوں سے بچائو حفاظتی ٹیکوں کے ذریعے پیشگی علاج کا حکم
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 29 April 2018 12:46 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

آج کل محکمہ صحت کی ٹیمیں گھر گھر جا کر ۵ سال تک عمر کے بچوں کو اور ۱۵ سے ۴۵ برس تک کی عورتوں کو پولیو، تشنج وغیرہ مفروضہ بیماریوں کے نام پر ٹیکے لگاتی ہیں جب کہ اللہ تعالیٰ نے کسی کو ان بیماریوں سے دوچار بھی نہیں کیا ہے، کیا اس قسم کی حفاظت جائز ہے جب کہ قرآن کریم میں تو یہ آیت اس کے اُلٹ ہے یعنی

﴿ وَإِذا مَرِضتُ فَهُوَ يَشفينِ ﴿٨٠﴾... سورة الشعراء

’’جب میں بیمار (پہلے) ہوتا ہوں پھر وہ (بعد)ـ شفا دیتا ہے۔ ‘‘ (عبد الرزاق اختر، محمدی چوک، حبیب کالونی گلی نمبر ۱۲، رحیم یار خان) (مارچ ۲۰۰۵)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اس آیت کا قطعاً یہ معنی نہیں کہ احتیاطی تدابیر اختیار نہیں کرنی چاہئیں، شرع میں علاج معالجے کا حکم ہے، رسول اللہ  رحمہ اللہ  نے فرمایا ’فَتَدَاوَوْا‘ ’’پس علاج کرو‘‘سنن أبی داؤد،بَابٌ فِی الْأَدْوِیَۃِ الْمَکْرُوہَۃِ،رقم: ۳۸۷۴،السنن الکبرٰی للبیہقی،رقم:۱۹۶۸۱

 دوائی کا استعمال اللہ کی طرف سے شفاء کا ذریعہ ہے، جس سے انکار کی گنجائش نہیں۔

     ھذا ما عندی والله اعلم بالصواب

فتاویٰ حافظ ثناء اللہ مدنی

جلد:3،متفرقات:صفحہ:601

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)