فتاویٰ جات
فتویٰ نمبر : 26174
(526) خصی جانور کی قربانی کا حکم اور ممانعت والی روایات و آثار کی وضاحت
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 16 April 2018 12:58 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا خصی جانور کی قربانی درست ہے ؟ (سائل) (۷ فروری ۲۰۰۳ئ)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

خصی جانور کی قربانی کرنا درست ہے۔ ابو رافع کی روایت میں ہے کہ:

’’رسول اللہ ﷺ نے دو سفید سیاہی مائل خصی کیے ہوئے دنبوں کی قربانی دی۔‘‘

یہ روایت ’’مسند احمد‘‘ میں ہے۔ علامہ البانی رحمہ اللہ نے ’’ارواء الغلیل‘‘(۴/۳۶۰) میں اس پر صحت کا حکم لگایا ہے۔ ’’الموسوعۃ الحدیثیۃ لامام احمد بن حنبل‘‘ میں ابوہریرہ رضی اللہ عنہ یا عائشہ رضی اللہ عنہا  سے مروی ہے کہ:

’أَنَّ رَسُولَ اللهِ صَلَّی اللهُ عَلَیْهِ وَسَلَّمَ ضَحَّی بِکَبْشَیْنِ سَمِینَیْنِ عَظِیمَیْنِ أَمْلَحَیْنِ أَقْرَنَیْنِ مُوْجَیَیْنِ۔‘ مسند احمد،رقم:۲۵۰۴۶

’’رسول اللہﷺ نے دو سفید سیاہی مائل،موٹے تازے، سینگوں والے دنبوں کو قربان کیا۔‘‘

پھر اس پر صحیح لغیرہ کا حکم لگایا ہے۔ ملاحظہ ہو:(۴۱/۴۹۷)

    ھذا ما عندی والله اعلم بالصواب

فتاویٰ حافظ ثناء اللہ مدنی

جلد:3،کتاب الصوم:صفحہ:411

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)