فتاویٰ جات
فتویٰ نمبر : 2572
(244) عورت وضو کرنے کے بعد اپنے بچے کو استنجا کراتی ہے
شروع از بتاریخ : 17 February 2013 04:15 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

 وضو کرنے کے بعد ایک والدہ اپنے بچے کا استنجا کراتی ہے آیا اس کا وضوء باقی رہے گا؟ اور«مَنْ مَسَّ ذَکَرَہٗ » کی کیا توضیح ہے؟

____________________________________________________________________

الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

« مَنْ مَسَّ ذَکَرَه» میں تو یہ صورت شامل نہیں ، باقی اس سلسلہ میں کوئی صریح نص تو مجھے معلوم نہیں۔
[جو اپنی شرم گاہ کو چھوئے وہ نماز نہ پڑھے حتی کہ وضو کر لے ۔ (ابو داؤد،کتاب الطہارة، باب الوضوء من مس الذکر،  نسائی ،کتاب الطہارة، باب الوضوء من مس الذکر، ابن ماجہ ،کتاب الطہارة، باب الوضوء من مس الذکر، ترمذی، ابواب الطہارة، باب الوضوء من مس الذکر)

قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام ومسائل

جلد 02

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)