فتاویٰ جات
فتویٰ نمبر : 2538
(161) بغیر وضو کے اذان نہ دی جائے اس حدیث کی تحقیق
شروع از بتاریخ : 17 February 2013 02:31 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ایک حدیث میں ہے :’’نہ کوئی اذان دے مگر وہ جو با وضو ہو۔‘‘  (ترمذي، أبواب الصلاة، باب ما جاء في كراهية الأذان بغير وضوء) یہ حدیث صحیح ہے یا حسن یا ضعیف ہے؟   


 

الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

 ترمذی والی سند میں تین نقص ہیں : ولید بن مسلم کی تدلیس ، معاویہ بن یحییٰ صدفی کا ضعف اور زہری ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کے درمیان انقطاع ۔ لہٰذا یہ روایت ضعیف و کمزور ہے ۔ قابل احتجاج و استدلال نہیں۔

فتاویٰ علمائے حدیث

کتاب الصلاۃجلد 1

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)