فتاویٰ جات
فتویٰ نمبر : 2524
نماز کی حالت میں کوئی دنیاوی بات یاد آجائے
شروع از بتاریخ : 17 February 2013 01:45 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

نماز میں اگر کوئی بات یاد آ جائے مثلاً کسی سے ملنا ، کسی سے لین دین کرنا ، کسی سے کوئی ضروری بات پوچھنا ، تو کیا ان باتوں کو ذہن نشین کرے یا نماز کی طرف توجہ کرے؟


 

الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

نہیں! ان کے پیچھے نہ پڑھے ، توجہ نماز کی طرف مبذول کرلے ۔

 قَالَ مَا الْاِحسَانُ ، قَالَ أَنْ تَعْبُدَ اللّٰہَ کَاَنَّك تَرَاہُ فَاِن لَّمْ تَکُنْ تَرَاہُ فَاِنَّـه یَرَاك
’’آپ نے فرمایا: احسان یہ ہے کہ تو اپنے رب کی عبادت اس انداز سے کرے کہ تو اسے دیکھ رہا ہے ، اگر ایسے نہیں تو پھر یہ (تصور کر) کہ وہ تجھے دیکھ رہا ہے۔ (بخاری،الإیمان،باب سوال جبریل النبی عن الایمان والاسلام والاحسان و علم الساعة)

فتاوی احکام ومسائل

کتاب الصلاۃ ج 2 ص 180

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)