فتاویٰ جات
فتویٰ نمبر : 2474
تانبے کا برتن ایک مسجد سے دوسری مسجد کو دینا جبکہ پہلی مسجد میں اس کی ضرورت نہ رہی ہو
شروع از بتاریخ : 16 February 2013 07:54 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ایک شخص نے ایک مسجد کو نمازیوں کے وضو کرنے سے کے لیے تانبے کا اتنا بڑا برتن وقف کیا ہے جس میں دس مٹکے کے قریب پانی آتا ہے مگر اب اس مسجد میں وضو کے لیے ایک حوض بنا دیا گیا ہے جس سے برتن (ٹانکی) بالکل بے کار ہو گیا ہے۔ اس میں پانی بھرنے کی ضرورت نہیں، مصلی حوض کے پانی سے وضو کرتے ہیں، اب اس برتن کی اس مسجد میں مطلق ضرورت نہیں ہے، اور دوسرے گاؤں میں ایک نئی مسجد تعمیر ہوئی ہے جس میں وضو کے پانی کے لیے برتن کی ضرورت ہے، پس کیا یہ برتن اُس نئی مسجد میں لے جا سکتے ہیں؟ اور کیا ایک مسجد کی چیز دوسری مسجد میں استعمال کر سکتے ہیں؟

_______________________________________________

الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

 جب وقف شدہ چیز بے کار ہو جائے یا ضائع ہوتی ہوئی نظر آئے تو ایسی صورت اختیار کرنی چاہیے کہ وہ ضائع نہ ہو، اور کار آمد ہو سکے۔ مثلاً اس کو فروخت کر کے اس کی قیمت اسی موقوف علیہ مسجد پر لگا دے یا کسی دوسری مسجد میں اس چیز کی ضرورت ہو تو اس میں صرف کر دی جائے۔
عن عائشة قالت سمعت رسول اللّٰہ صلی اللہ علیه وسلم یقول: «لو لا ان قومك حدیثو عھد بجاھلیة أو قال بکفر لا نفقت کنز الکعبة فی سبیل اللّٰہ ولجعلت بابھا بالأرض ولا دخلت فیھا من الحجر»  (مسلم)
کنز کعبہ سے مراد وہ اموال ہیں، جو زائرین خانہ کعبہ نذر کیا کرتے تھے، آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے جب دیکھا کہ یہ خزانہ بیت اللہ کی ضروریات اور حاجت سے زائد ہے تو فی سبیل اللہ تقسیم کرنے کا ارادہ فرمایا لیکن عذر مذکور فی الحدیث کی وجہ سے اس ارادہ کو پورا نہیں فرمایا، معلوم ہوا کہ وقف شدہ چیز بے کار ہو جائے یا ضائع ہوتی ہوئی نظر آئے تو ایسی صورت اختیار کرنی چاہیے کہ وہ ضائع نہ ہو۔(محدث دہلی جلد نمبر ۸ ش نمبر ۴)

فتاویٰ علمائے حدیث

کتاب الصلاۃجلد 1 ص 77
محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)