فتاویٰ جات
فتویٰ نمبر : 2416
(88) نہ چھوئے قرآن پاک کو مگر پاک والی روایت حسن صحیح ہے
شروع از بتاریخ : 14 February 2013 09:37 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

احکام و مسائل ص:۹۷ ، جلد اوّل میں آپ نے یہ روایت درج کی ہے:«لا یمس القرآن إلا طاھر» اس کی سند میں سلیمان بن داؤد راوی ہے اس کے بارے میں امام ذہبی رحمہ اللہ لکھتے ہیں:
’قال ابن معین لا یُعرف والحدیث لا یصحُّ وقال مرة لیس بشیئٍ وقال مرة شامي ضعیف وقال عثمان بن سعید سلیمان بن داؤد الخولانی یروی عن یحییٰ بن حمزة ضعیف ’
اور مذکورہ روایت یحییٰ بن حمزہ سے مروی ہے۔ (میزان الاعتدال)
تو اب اس روایت سے کیا استدلال جائز ہے؟
_______________________________________________________________________

الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

 آپ نے میزان الاعتدال سلیمان بن داؤد الخولانی کے ترجمہ سے ان کے متعلق یحییٰ بن معین اور عثمان بن سعید کے اقوال نقل فرمائے ہیں جبکہ اسی میزان الاعتدال میں سلیمان بن داؤد الخولانی کے ترجمہ میں ان کے متعلق اور محدثین کے اقوال بھی موجود ہیں:
۱۔قال أحمد:…"أرجو أن یکون صحیحا ، وأخرجه فی مسندہ عن الحکم بن موسی"
۲۔قال ابن عدی:…"ولیحیی بن حمزة عن سلیمان بن داؤد الخولانی الدمشقی أحادیث کثیرة ، وأرجو أنه لیس کما قال یحیی بن معین ، و أحادیثہ حسان مستقیمة ، وقول أحمد: إنه من أھل الجزیرة ، وإنه سلیمان بن أبی داؤد ، وما ذکروہ من أنه وجد فی أصل یحیی عن سلیمان ابن ارقم ولکن الحکم لم یضبط خطأ فان الحکم قد ضبط ذٰلک سلیمان ابن داؤد الخولانی ، ولکنہ رجل مجھول. یعنی الخولانی.
    أقول:… إذا کان الخولانی عند ابن عدی رجلا مجھولا فکیف یکون حدیثہ عند ابن عدی نفسه حسنا مستقیما؟ وقد قال ھو عینه حسب ما نقل عنہ الذھبی۔ وأحادیثه حسان مستقیمة۔ وقد قال : وأرجو أنه لیس کما قال یحیی بن معین۔
    والحل أن القول بأن أحادیثہ حسان مستقیمة ، وأنہ لیس کما قال یحیی بن معین۔ لیسا من أقوال ابن عدی ، وإنما ھما من أقوال عثمان بن سعید کما یبدو ذلک بالرجوع الکامل۔ وقد ظھر من ذلك أن الرجل لیس بضعیف عند عثمان بن سعید أیضا ، بل ھو عندہ من رواة الحسان المستقیمة ، ولیس عندہ بمجھول ، ولاغیر صحیح الحدیث ، ولا بضعیف ، ولا لیس بشیء کما قال یحیی۔ فقول الذھبی : قال عثمان بن سعید : سلیمان بن داؤد الخولانی یروی عن یحیی بن حمزة ضعیف۔ کما تری ۔ ثم صواب العبارة : یروی عنه یحیی بن حمزة۔
    وفی الحل نظر ظاہر فإن ابن عدی قال فی الکامل : وقد روی عن سلیمان بن داؤد غیر یحیی بن حمزة ، وصدقة بن عبد اللہ کما ذکرته من الشامیین وأماحدیث الصدقات فلہ أصل فی بعض رواة معمر عن الزھری عن أبی بکر ابن عمرو بن حزم، فأفسد إسنادہ ، وحدیث سلیمان بن داود مجود الإسناد۔۱ھـ ،فلا یکون الخولانی عند ابن عدی أیضاً رجلاً مجھولاً ، وإلا لم یکن حدیثہ عند ابن عدی مجود الإسناد ، وکلام ابن عدی ھذا حکاہ صاحب تہذیب التھذیب بلفظ : وقال ابن عدی : للحدیث أصل فی بعض مارواہ معمر عن الزھری لکنہ أفسد إسنادہ ، ورواہ سلیمان ابن داؤد ھذا فجود الإسناد۔۱ھـ
    قال ابن عدی فی الکامل : وھذا الذی ذکر عن أحمد بن حنبل مما قد ذکرتہ أن ھذا سلیمان بن أبی داؤد من أھل الجزیرة ، وما ذکرت أنہ وجد فی أصل یحیی بن حمزة عن سلیمان بن أرقم ، ولکن الحکم لم یضبطہ جمیعا خطأ۔ والحکم بن موسی قد ضبط ذلك، وسلیمان بن داؤد الخولانی صحیح کما ذکرہ الحکم ، وقد رواہ عنہ غیر یحیی بن حمزة إلا أنہ مجھول۔ ۱ھـ فالضمیر المنصوب فی قولہ : أنہ مجھول۔ یعود علی قولہ : غیر یحیی بن حمزة ۔ لا علی یحیی بن حمزة، ولا علی سلیمان بن داؤد الخولانی ، فالذھبی۔ رحمہ اللہ تعالیٰ۔ قد أخطأ فی فھم کلام ابن عدی فی موضعین الأول أنہ عزا قول : ولیحیی بن حمزة عن سلیمان بن داؤد الخولانی الدمشقی أحادیث کثیرة الخ إلی ابن عدی ، وانما ھو لعثمان بن سعید الدارمی۔ والثانی أنہ أعاد الضمیر المنصوب فی قولہ : ولکنہ رجل مجھول۔ علی سلیمان بن داؤد حیث قال بعدہ : یعنی الخولانی ، وانما یعود علی قولہ : غیر یحیی بن حمزة۔ الذی أسقطہ صاحب المیزان من البین۔ واللہ أعلم۔
    ھذا وقد قال صاحب تہذیب التہذیب : وقال البیہقی : وقد أثنی علی سلیمان بن داؤد أبو زرعة، وأبو حاتم ، و عثمان بن سعید ، وجماعة من الحفاظ ، ورأوا ھذا الحدیث الذی رواہ فی الصدقات موصول الإسناد حسنا۔ ۱ھـ
    وبعد التیاو التی قال الحافظ فی تہذیب التہذیب : أما سلیمان بن داؤد الخولانی فلا ریب فی أنہ صدوق لکن الشبھة دخلت علی حدیث الصدقات من جھة أن الحکم بن موسی غلط فی أسم والد سلیمان ، فقال : سلیمان ابن داؤد۔ وإنما ھوسلیمان بن أرقم ، فمن أخذبھذا ضعف الحدیث ولا سیما مع قول من قال : إنہ قرأہ کذلک فی أصل یحیی بن حمزة ………… وأما من صححہ فأخذوہ علی ظاھرہ فی أنہ سلیمان بن داؤد… الخ۔ وقد درست فی کلام ابن عدی أن قول من قال من أھل العلم : إن الحکم لم یضبطہ۔ خطأ ، وأن الحکم بن موسی قد ضبط ذلک ، وسلیمان بن داؤد الخولانی صحیح کما ذکرہ الحکم"
۳۔ وقال ابن حبان:… "سلیمان بن داؤد الخولانی ثقة"
۴۔ وقال الدارقطنی:… "لیس بہ بأس "
تو دیکھئے جناب چار ائمہ محدثین امام احمد بن حنبل ، امام ابو احمد ابن عدی ، امام ابن حبان اور امام دار قطنی۔ رحمہم اللہ اجمعین ۔ کے توثیقِ خولانی میں اقوال اسی میزان میں موجود ہیں جس میزان سے آپ نے تضعیف خولانی میں یحییٰ بن معین اور عثمان بن سعید دارمی کے قول نقل فرمائے ہیں۔پھر میزان ہی میں ابن عدی کے حوالہ سے ابن معین کے قول کا رد موجود ہے اور ابن عدی کے حوالہ سے گزر چکا ہے کہ عثمان بن سعید دارمی، یحییٰ بن حمزہ عن سلیمان بن داؤد خولانی کی احادیث کو حسان مستقیمہ قرار دیتے ہیں تو آپ کی ان سے نقل کردہ تضعیف بھی کافور ہو گئی تو اب جناب خود ہی انصاف فرمائیں جو کچھ آپ نے سلیمان بن داؤد خولانی کے متعلق لکھا وہ کس زمرہ میں آتا ہے؟
قال الألبانی فی إرواء الغلیل:… ۱۲۲ حدیث أبی بکر بن محمد بن عمرو بن حزم عن أبیہ عن جدہ أن النبی ﷺ کتب إلی أھل الیمن کتابا۔ وفیہ : لا یمس القران إلا طاھر۔رواہ الأثرم ، والدار قطنی متصلاً ، واحتج بہ أحمد ، وھو لما لك فی المؤطا مرسلاً۔
صحیح روی من حدیث عمرو بن حزم ، وحکیم بن جزام ، وابن عمر ، وعثمان بن أبی العاص۔
أما حدیث عمرو بن حزم فھو ضعیف فیہ سلیمان بن أرقم وھو ضعیف جداً ، وقد أخطأ بعض الرواة فسماہ سلیمان بن داؤد وھوالخولانی ، وھو ثقة ، وبناء علیہ توھم بعض العلماء صحتہ ، وإنما ھو ضعیف من أجل ابن أرقم ھذا ۔۱ھـ وقد رجع الألبانی عن قولہ ھذا حیث قال فی الإرواء نفسہ : وبعد کتابة ما تقدم بزمن بعید و جدت حدیث عمرو بن حزم فی کتاب فوائد أبی شعیب من روایة أبی الحسن محمد أحمد الزعفرانی ، وھو من روایة سلیمان بن داؤد الذی سبق ذکرہ ، ثم روی عن البغوی أنہ قال : سمعت أحمد بن حنبل ، وسئل عن ھذا الحدیث ، فقال : أرجو أن یکون صحیحا۔۱ھـ (۱؍۱۵۸۔۱۶۱)
تو خلاصہ کلام یہ ہے کہ عمرو بن حزم رحمہ اللہ والی حدیث بطریق سلیمان بن داؤد خولانی حسن صحیح ہے ۔ لہٰذا آپ کا قول ’’تو اب اس روایت سے کیا استدلال جائز ہے؟ ‘‘ بے وزن ، بے قیمت اور بے بنیاد ہے۔واللہ اعلم

قرآن وحدیث کی روشنی میں احکام ومسائل

جلد 02


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)