فتاویٰ جات
فتویٰ نمبر : 22023
(40) قربانی کے دن حاجی کے لیے کون سا کام افضل ہے ؟
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 13 July 2017 11:34 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

قربانی کے دن حاجی کے لیے کون سا کام افضل ہے ؟ اور کیا تقدیم و تاخیر جائز ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة الله وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

سنت یہ ہے کہ قربانی کے دن جمرۃ العقبہ کو کنکریاں مارے جو مکہ مکرمہ کی جانب ہے سات الگ الگ کنکریاں مارے ہر کنکری کو مارتے وقت تکبیر کہے اگر اس کے پاس جانور ہے تو قربانی کرے۔ پھر سر کے بال منڈائے یا کٹائے۔ منڈانا افضل ہے پھر طواف کرے اور سعی بھی اگر اس کے ذمہ سعی باقی ہے یہی افضل ہے اس لیے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم  نے ایسا ہی کیا تھا پہلے کنکریاں ماریں پھر قربانی کی، اس کے بعد بال منڈائے پھر مکہ مکرمہ تشریف لے گئےاور طواف کیا یہی ترتیب افضل ہے لیکن اگر کوئی شخص ان میں سے کسی کام کو آگے پیچھے کر دیتا ہے تو کوئی حرج نہیں ہے اگر رمی سے قبل قربانی یارمی سے قبل طواف افاضہ یا رمی سے پہلے بال منڈالے یا قربانی سے پہلے بال منڈالے تو کوئی حرج نہیں۔ کیونکہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم  سے ایسے آدمی کے بارے میں پوچھا گیا جو کسی کام کو آگے پیچھے کردے تو آپ نے فرمایا کہ کوئی حرج نہیں کوئی حرج نہیں۔

ھذا ما عندی والله اعلم بالصواب

حج بیت اللہ اور عمرہ کے متعلق چنداہم فتاوی

صفحہ:41

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)