فتاویٰ جات
فتویٰ نمبر : 17714
(173)اگرمسبوق زیادہ ہوں اور ہرایک اپنی فوت شدہ رکعت کی قضاء میں قراءۃ بالجہر کرےتو اس کاحکم کیا ہے ؟
شروع از Rafiqu ur Rahman بتاریخ : 19 September 2016 12:55 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

 اگرمسبوق ایک سےزیادہ ہوں اور ہرایک اپنی فوت شدہ رکعت کی قضاء میں قراءۃ  بالجہر کرےتو اس کاحکم کیا ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

کئی مسبوق ہوں توان کا فوت شدہ رکعت میں قراءۃ سرا کرنااس اعتبار سےبہتر ہےکہ سب کے جہرا قراءۃ کرنےکی صورت میں ایک کی آواز دوسرے سےٹکڑائے گی۔ مسجد میں اس طرح ایک شورہوگا اوردوسرے حاضرین کےاور ادواظائف واداء نفل وسنت میں خلل ہوگا۔ ہاں اگر جہر میں صرف اسماع نفس خود پراکتفاکریں  ، تو اس صورت پر ان کا قراءۃ بالجہر کرنا اچھا ہے ليكون القضاء كالاداء –

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ شیخ الحدیث مبارکپوری

جلد نمبر 1

صفحہ نمبر 266

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)