فتاویٰ جات: معاملات
فتویٰ نمبر : 17069
(194)اجنبی عورت سے مصافحہ کا کیا حکم ہے؟
شروع از Rafiqu ur Rahman بتاریخ : 16 June 2016 09:28 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

اجنبی عورت سے مصافحہ کا کیا حکم ہے؟ اور جب عورت اپنے ہاتھ پر کپڑے وغیرہ کی آڑ کرے تو کیا حکم ہے؟ اور اگر مصافحہ کرنے والا جوان ہو یا بوڑھا ہو یا مصافحہ کرنے والی بڑھیا ہو تو کیا حکم مختلف ہو جائے گا؟ (عبداللطیف۔ م۔ع۔ الریاض)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

غیر محرم مردوں سے عورتوں کو مصافحہ کرنا مطلقاً جائز نہیں۔ خواہ عورتیں جو ان ہوں یا بوڑھی اور خواہ مصافحہ کرنے والا نوجوان ہو یا بہت بوڑھا، کیونکہ اس میں دونوں میں سے ہر ایک کے لیے فتنہ کا خطرہ ہے اور رسول اللہﷺ سے صحیح طور پر ثابت ہے کہ آپﷺ نے فرمایا:

((انِّی لَا اُصافحُ النِّسَاء))

’’میں عورتوں سے مصافحہ نہیں کیا کرتا۔‘‘

اور حضرت عائشہc فرماتی ہیں:

((مَا مَسَّتْ یَدُ رَسُولِ الله  یَدَ امْرَأَة قَطُّ مَا کانَ یُبَایِعُهن إِلَّا بِالْکَلَام))

’’کسی عورت کے ہاتھ نے رسول اللہﷺ کے ہاتھ کو کبھی نہیں چھوا۔ آپﷺ انہیں صرف کلام سے بیعت فرماتے تھے۔‘‘

اور دلائل میں عموم کی وجہ سے اس بات سے کچھ فرق نہیں پڑتا کہ مصافحہ کرتے وقت ہاتھ پر کپڑا وغیرہ رکھ لیا جائے اور اس لیے بھی یہ جائز نہیں کہ فتنہ کی طرف لے جانے والے ذرائع کا سدباب ہے۔
ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ دارالسلام

ج 1

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)