فتویٰ نمبر : 16565
(72)بغیر وضو قرآن کو ہاتھ لگانا حرام ہے .؟
شروع از Rafiqu ur Rahman بتاریخ : 10 May 2016 10:12 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

بعض کتابوں میں لکھاہےکہ بغیر وضو کےقرآن کوہاتھ لگانا حرام ہےدلیل میں آیت لکھی ہے:﴿لا يَمَسُّهُ إِلَّا المُطَهَّرونَ ﴿٧٩﴾...الواقعة  اس کا ترجمہ یہ کیا ہے’’بغیروضوقرآن  کوہاتھ لگانا حرام ہے،،کیا اس آیت کایہی معنی ہے؟ یا اس کامعنی یہ ہے’’ نہیں چھوتےا س کو مگر پاک لوگ ،،


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

چاروں امام کہتےہیں کہ بغیروضو ، قرآن کوچھونا جائز نہیں ہے۔ان لوگوں کےنزدیک اس آیت کامعنی یہ ہے’’قرآن کونہ چھوئیں مگر پاک لوگ،،۔یعنی بےوضوقرآن کوچھونا حرام اورممنوع ہے۔اما م داؤد ظاہر ی اور علامہ ابن حزم کہتے ہیں کہ بغیر وضوقرآ ن کو ہاتھ لگانا جائز ہےاور اس آیت کایہ معنی کرتے ہیں ’’نہیں چھوتے ہیں ا س کو یعنی قرآن کو جولوح محفوظ میں درج ہےمگر پا ک لوگ یعنی:فرشتے،،ان دونوں اماموں کےنزدیک یہ آیت بمنزلہ اس آیت کےہے:﴿كَلّا إِنَّها تَذكِرَةٌ ﴿١١ فَمَن شاءَ ذَكَرَهُ ﴿١٢ فى صُحُفٍ مُكَرَّمَةٍ ﴿١٣مَرفوعَةٍ مُطَهَّرَةٍ ﴿١٤ بِأَيدى سَفَرَةٍ ﴿١٥ كِرامٍ بَرَرَةٍ ﴿١٦﴾...عبس پہلا معنی راجح اورقوی ہے           قال الرازى : ’’ إن حمل اللفظ على حققة الخبر، فالأول أن يكون المراد القرآن،الذى عندالله تعالي، والمطهرون الملئكة إن حمل على النهى ، ان كان فى صورة الخبر، كان عموما فينا ، وهذا أولى ،لما روى عن النبى صلى الله عليه وسلم، أنه كتب لعمروبن حزم لايمس القرآن إلا طاهر، فوجب أن يكون نهيه ذلك بالآية، إذفيها إحتمال له،،انتهى ،وذكرالباجى هذين الاحتمالين بالتفصيل فى ’’شرح الموطأ ،، فليراجعه من شاء.

  (محدث ج: 8ش؍ 7رمضان 1359ھ ؍ نومبر1940ء)
ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ شیخ الحدیث مبارکپوری

جلد نمبر 1

صفحہ نمبر 180

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)