فتاویٰ جات: طہارت
فتویٰ نمبر : 1565
اسلام قبول کرتے وقت غسل واجب ہے..؟
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 16 July 2012 03:51 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا اسلام لانے سے جو غسل ہوتا ہے وہ فرض ہے ۔ میرے علم کے مطابق تو فرض ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!

الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد! 

درست اسلام لاتے وقت غسل فرض ہے۔

«عَنْ قَیْسِ بْنِ عَاصِمٍ قَالَ أَتَیْتُ النَّبِیَّﷺ أُرِیْدُ الْإِسْلاَمَ فَأَمَرَنِيْ أَنْ أَغْتَسِلَ بِمَائٍ وَسِدْرٍ» (ابوداؤد الطهارة باب في الرجل يسلم فيومر بالغسل)

’’قیس بن عاصم سے روایت ہے کہ جب وہ مسلمان ہوئے تو رسول اللہﷺنے انہیں حکم دیا کہ وہ پانی اور بیری کے پتوں کے ساتھ غسل کریں‘‘

وباللہ التوفیق

احکام و مسائل

غسل کا بیان ج1ص 94

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)