فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 15579
(18) آپﷺ کے والد کے ایمان کے بارے میں کوئی حدیث؟
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 05 April 2016 11:50 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته
رسول اللہ ﷺ کے والد  ماجد عبداللہ کے ایمان کے بارے میں کوئی  حدیث  صحیح صحاح ستہ میں موجود ہے یا نہیں ؟

الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

صحیح مسلم  کے کتاب  الایمان میں وسنن ابی داؤد  کے کتاب  السنۃ  میں جو حدیث  بروایت  حضرت  انس رضی اللہ عنہ  کے مروی ہے  اس سے ثابت  ہوتا ہے  کہ حضرت  رسول اللہ ﷺ کے والد ماجد کی  وفات  ایمان نہیں ہوئی  ہے ۔اور یہی قول  صحیح ہے ۔ اور بعض  روایات  ضعیفہ غیر  صحیحہ سے معلوم ہوتا ہے کہ وفات  ایمان پر ہوئی  ہے ۔ مگر  صحیح و معتبر   وہی روایت  ہے جو کہ صحیح مسلم وسنن ابی داؤد  میں ہے ۔ لیکن  ایسے مسائل میں بحث  کرنا عبث وبیکار ہے ۔ اس میں سکوت  اولی وافضل  ہے ۔ واللہ اعلم بالصواب

 عبارت  صحیح مسلم  وسنن  ابی داؤد  کی ذیل  میں مرقوم ہے  مع عبارت  شرح  صحیح مسلم للنوی  کے ۔

  حدثنا  موسي  بن اسماعيل  نا حماد  عن ثابت  عن انس  ان رجلا قال: يا رسول الله اين ابي ؟  قال: ابوك  في النار  فلماقفي قال: ان ابي  واباك  في النار  ‘ رواه ابوداؤد ّ
 حدثنا ابوبكر  بن ابي شيبة قال نا عفان  قالّ ناحماد  بن سلمة ثابت  عن انس  ان رجلا قال: يا رسول الله اين ابي ؟ قال : في النار قال  فلما  قفي  وعاه  فقال : ان ابي  واباك  في النار  رواه مسلم
  قال النووي  في شرح  مسلم : فيه  ان من  مات  في الفترة  علي ماكانت عليه   العرب  من عبادة  الاوثان  فهو  من اهل النار ّ وليس  هذا مواخذة  قبل  بلوغ  الدعوة   فان  هولاء  كانت  قد   بلغتهم  دعوة  ابراهيم  وغيره  من الانبياء  صلوات  الله تعالي وسلامه  عليهم

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ مولانا شمس الحق عظیم آبادی

ص146

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)