فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 13697
(98) من کنت مولاہ فعلی مولاہ
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 30 November 2014 02:12 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

دو حدیثوں کی تحقیق مطلوب ہے:

(۱)          من کنت مولاه فعلی مولاه
(۲)           انا مدینة علم و علی بابها۔

الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!
الحمد للہ رب العالمین والصلوة والسلام علی رسوله الامین، امابعد:

آپ کے سوالات کے مختصر جوابات درج ذیل ہیں:

۱۔             من کنت مولاہ فعلی مولاہ

یہ حدیث بالکل صحیح و متواتر ہے۔ دیکھئے ماہنامہ ’’الحدیث‘‘ حضرو، ج۳ شمارہ:۱۱ عدد مسلسل: ۱۸ ص۴۶

ونظم المتناثر من الحدیث المتواتر ص۲۰۶ حدیث: ۲۳۲، وقطف الازھار المتناثرۃ فی الاخبار المتواترۃ ص۲۷۷ ح:۱۰۲، و لقط اللآلی المتناثرۃ فی الاحادیث المتواترۃ ص۲۰۵ ح:۶۱

۲۔            انا مدینة العلم و علی بابها

یہ روایت سخت ضعیف و مردود ہے۔ دیکھئے المستدرک للحاکم ج۳ ص۱۲۷ ح۴۶۳۷

تنبیہ بلیغ:

حافظ حاکم نے کہا:

’’هذا حدیث صحیح الاسناد و لم یخرجاه و اابوالصلت ثقة مامون………‘‘

حافظ ذہبی نے حاکم کا رد کرتے ہوئے کہا: ’’بل موضوع…… «وابو الصلت»…… ولا والله لا ثقة و لا مامون‘‘ (تلخیص المستدرک ۱۲۷/۳)

اس روایت کی سند میں اعمش راوی مدلس ہیں اور روایت عن سے ہے۔ دوسرے راوی ابو معاویہ (محمد بن خازم الضریر) مدلس ہیں اور یہ روایت عن سے ہے۔ تیسرا راوی عبدالسلام بن صالح ابو الصلت: جمہور محدثین کے نزدیک ضعیف و مجروح ہے۔ چوتھے راوی محمد بن عبدالرحیم الہروی کے حالات مطلوب ہیں۔

سنن الترمذی (۳۷۲۳) میں ایک روایت ہے کہ ’’انا دارالحکمة و علی بابها‘‘ اس روایت کے بارے میں امام ترمذی فرماتے ہیں: ’’ھذا حدیث غریب منکر‘‘

اس روایت کے ایک راوی شریک بن عبداللہ القاضی مدلس ہیں اور روایت عن سے ہے۔ دوسرا راوی محمد بن عمر بن عبداللہ بن فیروز، ابن الرومی: لین الحدیث (ضعیف) ہے۔ دیکھئے تقریب التہذیب: ۶۱۶۹

اس روایت کی دوسری سندیں بھی سخت ضعیف و مردود ہیں۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ علمیہ (توضیح الاحکام)

ج2ص267

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)