فتاویٰ جات
فتویٰ نمبر : 13489
نماز عصر سے پہلے چار سنتیں
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 25 October 2014 11:21 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا نماز  عصر سے پہلے  چار رکعت  سنت  پڑھنا  صحیح احادیث سے ثابت ہے؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

سنن  الترمذی (429) سنن  ابن ماجہ  (1161) میں علی  رضی اللہ عنہ  سے مروی  ہے کہ "كان النبي صلي الله عليه وسلم  يصلي  قبل العصر اربع  ركعات"  نبی ﷺ عصر سے  پہلے  چار رکعتیں  پڑھتے تھے ۔ یہ روایت  شواہد کے ساتھ حسن  ہے۔ دیکھئے الاوسط  للطبرانی  ( 3/275،276ح2601) سنن الترمذی  (430) وسنن بای داؤد (1271) میں ابن  عمر عن  النبی صلی اللہ علیہ وسلم کی سند سے روایت ہے کہ « رحم الله امرا صلي قبل العصر اربعا»  اللہ اس آدمی پر  رحم کرے  جو عصر سے پہلے  چار رکعتیں پڑھے۔اس کی سند  حسن ہے ،اسے  ابن خزیمہ  (1193) اور ابن  حبان  ۔الموارد(616) نے صحیح قراردیا ہے ۔

 امام اسحاق بنراہویہ  کے نزدیک  یہ رکعتیں سلام  کے بغیر  دو تشہد وں  سے پڑھنا  چاہئیں  تاہم  حدیث «صلوة  اليل  والنهار مثني  مثني » ( سنن ابی داود: 1295،سنن  الترمذی  :597 وسندہ حسن)) کی  رو سے  بہتر  یہی ہے کہ  یہ چار رکعتیں  دو دو کرکے  دو سلاموں  سے پڑھی  جائیں ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ علمیہ (توضیح الاحکام)

ج1ص419

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)